March 1, 2011

138 Comments

  1. وفاقی وزیر اقلیتی امور شہبازبھٹی قاتلانہ حملے میں ہلاک

    Updated at 1130 PST

    اسلام آباد … وفاقی وزیر اقلیتی امور شہباز بھٹی قاتلانہ حملے میں ہلاک ہوگئے ہیں۔پیپلز پارٹی سے تعلق رکھنے والے وفاقی وزیر اقلیتی امور شہباز بھٹی وفاقی دارالحکومت کے سیکٹر آئی ایٹ میں واقع اپنے گھر سے نکلے تھے ، جب وہ آئی ایٹ مرکز پہنچے تو وہاں موجود نامعلوم حملہ آوروں نے ان کی گاڑی پر فائرنگ کردی،جس میں وہ شدید زخمی ہوگئے ، انہیں تشویشناک حالت میں اسپتال منتقل کیا گیا ،جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسے۔حملہ آور موقع سے فرار ہوگئے ہیں، جبکہ پولیس حکام نے جائے وقوعہ کا محاصرہ کرلیا ہے اور شواہد جمع کئے جارہے ہیں۔

  2. Minorities minister killed in Islamabad

    DAWN.COM(14 minutes ago) TodayISLAMABAD: Federal Minister for Minority Affairs Shahbaz Bhatti was killed in an attack on his vehicle in Islamabad on Wednesday.

    Two gunmen fired on Bhatti’s vehicle in I-8/3 area of the capital. He was taken to the hospital where he succumbed to his injuries.

    Bhatti belongs to the Pakistan People’s Party

    http://www.dawn.com/2011/03/02/minorities-minister-attacked-in-islamabad.html

  3. appeybetta says:

    Kaal bhi Bhatti zinda tha Aj bhi Bhatti Zinda
    Haar ghar sey Bhatti nikley ga tum kitne Bhatti maro gey.

    A shameful act by gutless cowards.

    A dear soul departed…………………………………………

  4. Bawa said:
    نہایت ہی افسوسناک واقعہ
    ———————————-

    واقعہ افسوس ناک بھی ہے اور نہیں بھی. روزانہ اتنے عوام ان حکمرانوں کی وجہ سے مرتے ہیں آج ایک اور حکمران گیا.
    چیزیں بدلنے کے سو طریقے ہوتے ہیں اس کے لئے عوام کو ایجوکیٹ کیا جانا ضروری ہے . لیکن جس طرح کی حرکتیں ہمارے نام نہاد لبرل کرتے ہیں اسی طرح کا جواب نام نہاد مذہبی گروپ بھی دے دیتے ہیں. کوئی اپنی جنت پکی کرنے کے لئے لگا ہے اور کوئی دنیوی طاقتوں کو خوش کرنے کے لئے اونچی اونچی چھلانگیں لگا رہا ہے.
    تھوڑی دیر تک موصوف شہید بھی بن جائیں گے.

  5. Pakistanis face long delays for renewing passports
    Applicants frustrated with inadequate services

    By Ashfaq Ahmed, Chief Reporter Published: 00:00 March 3, 2011
    Applicants outside the Pakistan Consulate General in Dubai. There is no adequate standing room inside the consulate and long queues spill over to the road. Image Credit: Pankaj Sharma/Gulf News Dubai: Members of the Pakistani community renewing their passports continue to face the huge rush at their country’s missions in Dubai and Abu Dhabi after an evening shift to complete the procedure was suspended this week due to a shortage of staff.

    Hundreds of Pakistanis can be seen thronging the diplomatic missions in the two cities every day and many applicants say they have even had go and queue up at midnight to reach the appropriate window at the missions when they open the next day.

    The Pakistan Consulate General in Dubai had started the evening shift a few months ago to cope with the heavy rush. Gulf News has learnt it was catering to some 400 applicants but that had to be stopped this week due to shortage of staff and lack of funds to pay overtime to existing staff for filling in for the extra shift.

    “We are trying our best to accommodate as many people as possible but shortage of staff and limited resources have forced us to stop the evening shift,” said a spokesperson of the Consulate in Dubai.

    An official at the consulate said they have written several times to their government about the problems people were facing but have not got any response.

    A visit to the consulate revealed there were just a few seats, including some wooden benches, for the more than 800 people who visited the consulate daily, mainly for passport renewal and to apply for their national identity cards.

    There is not even adequate standing room inside the consulate and long queues spill over on to the road outside the premises. More than 500 people also visit the Pakistan Embassy in Abu Dhabi daily but are forced to return empty handed as they are not even able to reach the windows within the time allotted to business hours.

    Beating the queue

    This has prompted many of them to go to the missions as early as midnight and queue up to try and ensure that their applications are received. “I came here at 3am. The gate opens at around 7.30am but I found at least a dozen people already waiting in queue,” said Kareem Khan, a resident of Fujairah.

    As every applicant has to come in person to apply for passports, it is very difficult for families, especially women and children, to avail themselves of the services. Women feel very uncomfortable because there is no separate area for them. The Pakistan Consulate started an evening shift in July last year. The working hours were from 4.30pm to 7.30pm. Currently, the passport sections receive applications from 7.30am to 11am on working days, from Sunday to Thursday. Also, the number of tokens in the morning shift has been restricted to 400.

    Consulate officials had earlier promised to start an appointment system and a dedicated phone line for applicants but so far nothing has materialised. “The new building plan is ready but the government is not giving its approval,” an official said.

    Some criticised the Pakistan government for not releasing the funds to expand the facilities despite the fact that the missions generate a huge welfare fund. Every applicant pays Dh45 for the welfare fund along with the passport renewal fee. “Why is this fund not used to construct a bigger building and hire more staff?” asked Nafees Ahmad, a prominent community member.

    He said Pakistanis from the UAE remitted $800 million (Dh2.9 billion) in 2010 and the figure is set to increase to $1 billion this year, but they still receive bad treatment from their government.

    Currently, it takes around 15 days to get a passport through the “urgent” procedure, and around two to three months to go through the normal process. However, the delivery of the passports has been further delayed due to the malfunctioning of printing machines back in Pakistan. There is no longer an urgent service for same day issuance.

    http://gulfnews.com/news/gulf/uae/traffic-transport/pakistanis-face-long-delays-for-renewing-passports-1.770645

  6. jazoo says:

    World Cheers as the CIA Plunges Libya Into Chaos
    By David Rothscum
    March 01, 2011 “Information Clearing House” — February 23, 2011 — How was Libya doing under the rule of Gadaffi? How bad did the people have it? Were they oppressed as we now commonly accept as fact? Let us look at the facts for a moment.

    Before the chaos erupted, Libya had a lower incarceration rate than the Czech republic . It ranked 61st. Libya had the lowest infant mortality rate of all of Africa. Libya had the highest life expectancy of all of Africa. Less than 5% of the population was undernourished. In response to the rising food prices around the world, the government of Libya abolished ALL taxes on food.

    People in Libya were rich. Libya had the highest gross domestic product (GDP) at purchasing power parity (PPP) per capita of all of Africa. The government took care to ensure that everyone in the country shared in the wealth. Libya had the highest Human Development Index of any country on the continent. The wealth was distributed equally. In Libya, a lower percentage of people lived below the poverty line than in the Netherlands.

    How does Libya get so rich? The answer is oil. The country has a lot of oil, and does not allow foreign corporations to steal the resources while the population starves, unlike countries like Nigeria , a country that is basically run by Shell.

    http://www.informationclearinghouse.info/article27596.htm

  7. بے بی افضاء کی نویں سالگرہ ہفتہ کو منائی جائے گی
    Updated at 1930 PST
    کراچی…متحدہ قومی موومنٹ کے قائد الطاف حسین کی صاحبزادی بے بی افضاء کی نویں سالگرہ ہفتہ 5مارچ کو منائی جائے گی ۔ سالگرہ کے سلسلے میں ایم کیوایم کے مرکز نائن زیرو عزیز آباد کے علاوہ اندرون سندھ ، صوبہ پنجاب ، بلوچستان ، خیبر پی کے ، گلگت بلتستان اور آزاد کشمیر میں ایم کیوایم کے دفاتر میں تقریبات منعقد کی جائیں گی ۔ ایم کیوایم کے مرکز نائن زیرو پر بے بی افضاء کی نویں سالگرہ کے موقع پر منعقدہ سالگرہ کی تقریب میں رابطہ کمیٹی کی جانب سے سالگرہ کا کیک کاٹا جائے گا ۔

    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/04-03-2011/u64419.htm

    ———————————————————————–

    یہ ہے ہمارے آزاد میڈیا کا حال
    لعنت ایسے میڈیا پر جو ڈر کے مارے ایک پارٹی کو ایسی بے تحاشا اور بے ٹکی کوریج دیتا ہے

  8. Bawa says:

    @ Revolutionانقلاب
    بے بی افضاء کی نویں سالگرہ ہفتہ کو منائی جائے گی
    Updated at 1930 PST
    کراچی…متحدہ قومی موومنٹ کے قائد الطاف حسین کی صاحبزادی بے بی افضاء کی نویں سالگرہ ہفتہ 5مارچ کو منائی جائے گی ۔ سالگرہ کے سلسلے میں ایم کیوایم کے مرکز نائن زیرو عزیز آباد کے علاوہ اندرون سندھ ، صوبہ پنجاب ، بلوچستان ، خیبر پی کے ، گلگت بلتستان اور آزاد کشمیر میں ایم کیوایم کے دفاتر میں تقریبات منعقد کی جائیں گی ۔ ایم کیوایم کے مرکز نائن زیرو پر بے بی افضاء کی نویں سالگرہ کے موقع پر منعقدہ سالگرہ کی تقریب میں رابطہ کمیٹی کی جانب سے سالگرہ کا کیک کاٹا جائے گا ۔

    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/04-03-2011/u64419.htm

    ———————————————————————–

    یہ ہے ہمارے آزاد میڈیا کا حال
    لعنت ایسے میڈیا پر جو ڈر کے مارے ایک پارٹی کو ایسی بے تحاشا اور بے ٹکی کوریج دیتا ہے

    ……………………………

    گولی کھانے یا بوری میں بند ہونے سے لعنت برداشت کر لینا فایدہ مند ہے

    :) :)

    میرے خیال میں یہ کسی نمائندے کی خبر نہیں ہے بلکہ ایم کیو ایم کی پریس ریلیز ہے

  9. Bawa said:

    میرے خیال میں یہ کسی نمائندے کی خبر نہیں ہے بلکہ ایم کیو ایم کی پریس ریلیز ہے

    —————————————————————–

    ہماری پارٹی کے تو جلسے جلوس کبھی ٹی وی پر براہ رات نہیں دکھاتے اور نہ ہی پریس ریلیز لگاتے ہیں کیا یہ کھلا تضاد نہیں؟

  10. Bawa says:

    @ Revolutionانقلاب
    Bawa said:

    میرے خیال میں یہ کسی نمائندے کی خبر نہیں ہے بلکہ ایم کیو ایم کی پریس ریلیز ہے

    —————————————————————–

    ہماری پارٹی کے تو جلسے جلوس کبھی ٹی وی پر براہ رات نہیں دکھاتے اور نہ ہی پریس ریلیز لگاتے ہیں کیا یہ کھلا تضاد نہیں؟

    ………………………………..

    پریس ریلیز تو عام آدمی بھی اخبار کے آفس جا کر دے دے تو لگا دیا جاتا ہے. یا تو آپکے بندوں کو اخبار کے آفس جانے کی توفیق نہیں ہوتی یا پھر کسی نے منع کیا ہوگا لیکن یہ کام تو ایک معمولی اخبار کا ملازم بھی کر سکتا ہے. اب تو آپ پریس ریلیز فیکس بھی کر سکتے ہیں. پریس ریلیز کی کوئی اہمیت نہیں ہوتی سوائے اس کہ کہ آپکی بات لوگوں تک پہنچ جاتی ہے

  11. Bawa says:

    @ saleem raza

    و علیکم السلام رضا بھائی

    آج انقلاب بھائی کو دکان پر بٹھا کر خود گاڑی کی سیر کر رہے ہیں

    موجاں ای موجاں

  12. Bawa says:

    @ Revolutionانقلاب

    saleem raza said:

    باوا جی اور انقلاب بھائ ۔السلام علیکم

    دہشت گردوں کی ہٹ لسٹ ،میں پہلے شیر ی دوسرے اور فوزیہ وہاب تیسرے نمبر پرہیں:رحمٰن ملک
    http://dailypak.com/index.php?pag=detail&id=21753

    کیا ایسی چیزیں عام کر کے یہ ان لوگوں کا بھلا کر رہا ہے؟

    ………………………..

    پہلا نمبر تو ٹھیک ہے

    :D :D

  13. saleem raza says:

    باوا جی انقلاب بھای کو شک رہتا ھے کہ میں ایسکریم خود کھا جاتا ھوں ۔
    اس لیے یہ کبھی کبھی چھاپہ مارتے ھیں ،
    میں ذرا افس پہنچ لوں ، پھر لچ تلتا ھوں ۔اسیا نہ ھو مھجے خود تڑکا لگ جاے 

  14. hypocrite says:

    Revolution sahib

    کیا ایسی چیزیں عام کر کے یہ ان لوگوں کا بھلا کر رہا ہے؟

    What do you expect from Malik sahib. Expecting something better from Malik sahib and the current government is just like someone expecta that I will leave hypocricy. (never)

    This brave soul left his leader dying and ran away. Could not give a single logical statement at the time of murder of BB. Talks first and thinks later. Hasnt been able to nab a single culprit and has no principle to resign despite the sorry situation of law and order.

  15. aftab says:

    Babar Awan indicted in Kidnap, dacoity case

    A local court of Rawalpindi has indicted federal law minister Babar Awan in an attempt of kidnap and dacoity case, Geo News reported on Saturday.

    Civil Judge Rawalpindi while hearing a pending case of kidnap and dacoity registered at New Town police station charged the minister and adjourned the hearing till March 12.

    Federal Minister Babar Awan was also present at the time of hearing.(GEO URDU)

    http://www.geo.tv/

  16. aftab says:

    Hoti turns down ADB’s 650mn loan offer

    PESHAWAR: Chief Minister Khyber Pakhtunkhwa Ameer Haider Khan Hoti has turned down offer of lending up to US$ 650 million from Asian Development Bank for reconstruction of damaged irrigation, transport and education sectors due to 2010 floods keeping in view long term interests of the government and the people and stressed less reliance on foreign loans for betterment of economy and damages reconstruction.

    It merits a mention here that ADB, in connection with reconstruction of damages in aforementioned sectors, has shown interest in provision of loan worth US$ 650 million with one percent mark up for 32 years and finalization of procedural action till March 31.

    The Chief Minister stressed dependency on available resources and turned down the loan apparently carrying soft conditions. Keeping in view future financial constraints of the province, the Chief Minister bid adieu to the loan with thanks.

    http://www.geo.tv/3-4-2011/78981.htm

  17. a1riz says:

    واشنگٹن ۔امریکہ نے ایک مرتبہ پھر اپنے موقف کو دوہراتے ہوئے کہا ہے کہ امریکی شہری ریمنڈ ڈیوس کو مکمل سفارتی استثنیٰ حاصل ہے اس کی رہائی کے لئے پاکستانی حکومت اور عدالتوں پر اپنا دباؤ جاری رکھیں گے ،میڈیا رپورٹس کے مطابق یہ بات امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان پی جے کرولی نے واشنگٹن میں پریس بریفنگ کے دوران کہی۔

    ترجمان نے ایک بار پھر ریمنڈ ڈیوس کی رہائی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان میں قید امریکی شہری کو فوجداری مقدمات میں مکمل استثنیٰ حاصل ہے جبکہ یہ معاملہ پاکستان میں ماتحت عدالتوں میں زیر سماعت ہے جس پر امریکہ کو تشویش ہے ،معاملہ عدالت میں ہونے کی وجہ سے ہم آئینی پہلوؤں پر بات نہیں کر سکتے،حکومت پاکستان نے سفارتی استثنیٰ کی دستاویزات عدالت میں جمع نہ کرائیں تو عدالت یہی سمجھے گی کہ ڈیوس کو استثنیٰ حاصل نہیں ہے۔

    انہوں نے کہا کہ ریمنڈ سے متعلق پاکستان سے رابطے میں ہیں حکومت پاکستان کو دس جنوری دوہزار دس کو آگاہ کر دیا تھا اور اسے سفارتی نوٹ بھی فراہم کر دیا گیا تھا اور ہم پاکستانی حکومت اور عدالتوں پر دباؤ جاری رکھیں گے ،ترجمان نے کہا کہ پاکستان کو ریمنڈ ڈیوس کو حاصل سفارتی استثنیٰ کا احترام کرنا چاہیے ،ترجمان محکمہ خارجہ کا یہ بیان ایسے وقت سامنے آیا ہے جب لاہور ہائی کورٹ نے ریمنڈ کے استثنیٰ کی درخواست مسترد کر دی ہے۔

    دوسری جانب ایک اسرائیلی اخبار یروشلم پوسٹ نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ اگرچہ امریکی قومی سلامتی حکام کا کہنا ہے کہ ریمنڈ ڈیوس کیس کا معاملہ حل ہوتا نظر آرہا ہے اگر یہ معاملہ جلد حل نہ ہواتو امریکہ پاکستان کے خلاف سزاکے طور پر سفارتی و مالیاتی کارروائی عمل میں لا سکتا ہے ،اخبار یروشلم پوسٹ نے کہا کہ امریکی سکیورٹی حکام کہتے ہیں کہ اسلام آباد اور واشنگٹن کے درمیان پرائیویٹ ملاقاتوں کے نتیجے میں ڈیوس کی رہائی کے لئے پیش رفت سامنے آئی ہے تاہم اخبار کے مطابق اگر یہ معاملہ جلد حل نہ ہوا تو امریکہ پاکستان کے خلاف سفارتی و مالیاتی محاذ پر کارروائی کر سکتا ہے۔

  18. نوشہرہ کی مسجد میں دھماکا، 10افراد شہید، درجنوں زخمی

    04 مارچ 2011 58 : 13

    نوشہرہ(مانیٹرنگ ڈیسک) نوشہرہ کے علاقے میں اکبر پورہ اخوند پنجو بابا کے مزار کے ساتھ واقع مسجد میں دھماکے سے 10افراد جاں بحق جبکہ خواتین اور بچوں سمیت درجنوں افراد زخمی ہوگئے۔ ابتدائی اطلاعات کے مطابق ریمورٹ کنٹرول بم مسجد کی الماری میں چھپایا گیا تھا جس کی وجہ سے نہ صرف مسجد کی عمارت کو نقصان پہنچا بلکہ درجنوں قرآن پاک بھی شہید ہوگئے۔دھماکا نماز جمعہ کے بعد ہوا جب نمازیوں میں لنگر تقسیم کیا جا رہا تھا۔ دھماکے بعد سکیورٹی فورسز کی بھاری نفری دھماکے کی جگہ پہنچ گئی ہیں اور شواہد جمع کیے جارہے ہیں۔پولیس کے مطابق زخمیوں کو پشاور کے ہسپتالوں میں منتقل کیا جارہا ہے جبکہ جائے وقوعہ پر امدادی کارروائیاں جاری ہیں۔نوشہرہ کے ہسپتال میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی۔ پولیس نے جائے وقوعہ سے دو مشتبہ افراد کو گرفتار کرلیا ہے اورعلاقے کو گھیرے میں لے لیا ہے۔ صدر زرداری اور فاروق ایچ نائیک نے دھماکے کی مذمت کی ہے۔
    http://dailypak.com/index.php?pag=detail&id=21744

  19. پیپلز پارٹی کے نام پر بھتہ لیا جارہاہے:ذوالفقار مرزا

    04 مارچ 2011 49 : 18

    کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک)وزیر داخلہ سندھ ذوالفقار مرزا نے کہا ہے کہ نائن زیرو کچھ لینے نہیں ، دینے گیا تھا اور ضرورت پڑنے پر دوبارہ جاؤں گا۔ کراچی میں میڈیا سے گفتگو میں ان کاکہنا تھا کہ پیپلز پارٹی امن کمیٹی کا نام لے کر بھتہ لیا جا رہا ہے، امن کمیٹی پولیس سے بھرپور تعاون کر رہی ہے، بھتہ خوری کے خاتمے کے لئے تاجروں کو ہمت دکھانا ہو گی۔ ذوالفقار مرزا نے کہا کہ میں نے حالات خراب ہونے کے باوجود ملک نہیں چھوڑا۔ ان کا کہنا تھا کہ(اے این پی) عوامی نیشنل پارٹی سندھ کے رہنما ءشاہی سید سے بھی دوستی ہے اور اکثر ان سے ملنے بھی جاتا ہوں۔
    http://dailypak.com/index.php?pag=detail&id=21754

    وفاقی اور صوبائی وزیر داخلہ کے بیان پڑھ کر سمجھ نہیںآتی کہ یہ نمایندے زیادہ جاہل ہیں یا ان کو اسمبلیوں میں پہنچانے والے یا ان کو وزیر بنانے والے .

  20. saleem raza says:

    Revolutionانقلاب said:
    پیپلز پارٹی کے نام پر بھتہ لیا جارہاہے:ذوالفقار مرزا
    —————————————————
    آلسلام و علیکم بھائی جی مھجے تو سب سے پہلےاُس عورت کی عقل پر رونا آتا ھے جس نے اس کے ساتھ شادی کی
    ھوئی ھے ۔آگر وہ کم عقل عورت اسمبلی میں چوھدرنی بن سکتی ھے ؛ تو اس کا وزیر بننا ان کی قسمت کا کم ؛ھماری
    بد قسمتی کا دخل زیادہ ھے ‘لیکن اب لگ تو رہا ھے ان بے غیرتوں سے جان چھوٹ ہی جاے گی ؛آگر سندھی بھاہیوں کی عقل آور قسمت آور مت پھر نہ ماری گئی

  21. saleem raza said:
    آلسلام و علیکم بھائی جی مھجے تو سب سے پہلےاُس عورت کی عقل پر رونا آتا ھے جس نے اس کے ساتھ شادی کی
    ھوئی ھے ۔آگر وہ کم عقل عورت اسمبلی میں چوھدرنی بن سکتی ھے ؛ تو اس کا وزیر بننا ان کی قسمت کا کم ؛ھماری
    بد قسمتی کا دخل زیادہ ھے ‘لیکن اب لگ تو رہا ھے ان بے غیرتوں سے جان چھوٹ ہی جاے گی ؛آگر سندھی بھاہیوں کی عقل آور قسمت آور مت پھر نہ ماری گئی

    ———————————————————–

    . تین چار دن پہلے میری آنکھوں کے سامنے ٹیلی فون پر ایک بندے نےلندن بیٹھ کر سندھ پنجاب کے بارڈر سے لے کر چھاچھرو سندھ تک سارے جلسے مینیج کر دیے. سندھ پنجاب کے بارڈر سے شاہ محمود قریشی کااستقبال قاف اور پی پی کے رہنماؤں نے کیا اور بسیں ٹرالیاں بھر بھر کر لوگوں کو لے کر آے. لوگ اپنے گھروں سے عورتوں کی چادریں شاہ محمود قریشی سے دم کروانے کے لئے لے کر آے.
    بڑے لوگ اپنے کام نکلواتے ہیں اور عوام اب بھی جاہلیت میں ان کے پیچھے بھیڑ بکریوں کی طرح لگے ہوے ہیں.
    پاکستان میں ووٹ زیادہ تر شہری حلقوں میں اپنی مرضی سے تبدیل ہوتا ہے دیہاتی اور دور دراز کے علاقوں میں تو اصل حقیقت کا کسی کو پتا ہی نہیں چلتا. یہی وجہ ہے کہ پیر پگارا جیسے لوگ بھی جیت جاتے ہیں اور بارے بارے پڑھے لکھ لوگ اس کے مریدوں کا ووٹ بنک لینے کے لئے اس کی پارٹی کا ٹکٹ لیتے ہیں.

  22. saleem raza says:

    بھای جی اپ کی بات بلکل ٹھیک ھے ۔ پورا پاکستان
    دم پر چل ریا ھے ،ایک تو یہ پیری مریدی لے بھٹی ھے ، مین نے اپنے کزن کو فون کیا تو کہتا ھے مین شاہ صاحب کے پاس افصال کے لیے پھوک مروانے گیا تھا ، مین کہا وہ لندن مین ھے ۔کہتا ھے جی یاں اسی کے لیے ہئ گیا تھا اس نے کھچ بندے بغیر پیپروں کے رکھے ھوےتھے،اور پکڑا گیا ھے ۔ شاہ جی نے کہا ھے فکر کرنے کی صرورت نہین ھے ۔
    اپ خود ابھی بی ایس سی کیا ھے جوان نے ،اتنی بات بتا کر فون بند
    کر دیا تھا ،اب وہ میرے ھاتھ نہین ارھا ۔یہ پیری مریدی نے بیڑا ہر طرف غرق کیا ھوا ھے 

  23. کراچی :مختلف علاقوں میں فائرنگ، تین افراد ہلاک،پانچ زخمی

    Updated at 0715 PST

    کراچی :مختلف علاقوں میں فائرنگ، تین افراد ہلاک،پانچ زخمی

    کراچی…کراچی کے مختلف علاقوں میں نامعلوم افراد کی فائرنگ سے تین افراد ہلاک اورپانچ زخمی ہوگئے۔پولیس کے مطابق ملیرمیں مسلح افراد نے ڈکیتی کی واردت کے دوران فائرنگ کرکے35 سالہ مکرم خان کو ہلاک کردیا، بفروزن میں نامعلوم ملزمان نے فائرنگ کرکے 25 سالہ شکیل عرف ڈاڈا کو قتل کردیا،پولیس کا کہنا ہے کہ مقتول کا تعلق گینگ وار سے تھا،جبکہ گلبہار کے علاقے پرانا گولیمار میں نامعلوم افراد کی فائرنگ سے 48 سالہ داد رحمان ہلاک ہوگیا،پولیس نے واقعے کو ذاتی دشمنی کا نتیجہ قرار دیا ہے،جبکہ مختلف علاقوں میں فائرنگ سے 5 افراد
    http://jang.net/urdu/update_details.asp?nid=112574

  24. Breaking news with Correction

    پولیس ٹریننگ سنٹرپولیس اہلکاروں کا جھگڑا ، فائرنگ سے ایک ہلاک ،5زخمی

    05 مارچ 2011 52 : 21

    کراچی ( مانیٹرنگ ڈیسک )سعید آباد میں تھانہ بلدیہ ٹاﺅن سے ملحقہ پولیس ٹریننگ سنٹر میں فائرنگ سے ایک اہلکار محمد یونس جاں بحق اور پانچ اہلکار زخمی ہوگئے جن میں سے زیادہ تر کی حالت شویشناک بتائی جاتی ہے ۔ پولیس کے مطابقیہ وقعہ پولیس اہلکاروں میں جھگڑے کے باعث اسوقت پیش آیا جب ایک اہلکار نے مشتعل ہو کر ساتھیوں پر اندھا دھند فائرنگ کر انہیں گرادیا. ان میں سے محمد یونس ہسپتال جاتے ہوئے دم توڑ گیا جبکہ دو اہلکاروں کی حالت نازک بیان کی گئی ہے.

    ——————————————————————————–
    http://dailypak.com/index.php?pag=detail&id=21789

    مجھے پورا یقین ہے کہ یہ وہی پولیس والے ٹریننگ کر رہے ہوں گے جو پی پی اور ایم کیو ایم نے آپس میں نوکریاں بانٹ کر بھرتی کیے ہیں. اب نے ڈرامے دیکھنے کو ملا کریں گے جیالے پولیس والے نے حق پرست پولیس والے کو مار ڈالا اور کبھی حق پرست پولیس والے نے جیالے پولیس والے کو مار ڈالا. پس ثابت ہوا جمہوریت ہی بہترین انتقام ہے-

  25. saleem raza says:

    باواجی السلام و علیکم ۔
    آنقلاب بھائی تو آج صبح کے توپ کر بیھٹے ھیں پتہ نہیں کتنے بندے اور ماریں گے۔

  26. saleem raza says:

    باوا جی مھجے آج تک ان لوگوں کی سمھج نہیں آتی ھم کو کوی گالی دے ؛ تو کبھی کسی نے آف تک نہیں کی آور آگر ھم گالی صرف جواب دیں تو ھم برے ھیں ؛ آور تو آور ھمارے اپنے دوست کہتے ھیں گالی کاجواب گالی سے نہ دیں /؂ جو کھچ نہیں کرتے وہ کمال کرتے ھیں ۔ میں نے آپ کے کم از کم دہ چور پکڑ لیے ھیں

  27. saleem raza says:

    Bawa said:
    @ saleem raza

    و علیکم السلام رضا بھائی

    لگتا ہے انقلاب بھائی نے زیادہ آئیس کریم کھا لی ہے
    ———————————————————-
    اب تو یقین ھو گیا ھے کہ دودھ میں کتنی طاقت ھوتی ھے ؛ اب تو لوگ میری طرف دیکھ کر کہتے مولوی صاحب
    کہیں سے آپنے پیٹ میں ھوا بھروا کر آرہے ھیں

  28. hypocrite says:

    Saleem Raza sahib

    If I really understood you then,

    جو دوست ہوتا ہے وہ دوست کو سمجھانے کی کوشش کرتا ہے. اگر دوست کو آپ چور کہنے لگے تو پھر آپ کا رتبہ ہم سے بہت ہی اونچا ہے . کم از کم میں اس رتبے تک نہیں پہنچ سکتا

  29. saleem raza says:

    hypocrite said:
    Saleem Raza sahib

    If I really understood you then,

    جو دوست ہوتا ہے وہ دوست کو سمجھانے کی کوشش کرتا ہے. اگر دوست کو آپ چور کہنے لگے تو پھر آپ کا رتبہ ہم سے بہت ہی اونچا ہے . کم از کم میں اس رتبے تک نہیں پہنچ سکتا
    ————————————————————-
    یا تو آپ ہر آدمی کو دوست سمجتے ھیں ؛ جو کہ میں ان لوگوں میں نہیں جو میرے دوست کی ماں بہن کو
    گالی دے اور میں چپکے سے سن کر نکل جاوں ؛
    آور نہ تو میں خود چور ھوں آور نہ میں چوروں کو دوست بنتا ھوں ۔
    آپ واقعی ہی اس رتبے تک نہیں پہنچے ۔ آپ تو ان لوگوں میں جو ہر حال میں صرف زندہ رینا چاہتے ھیں ؛
    لیکن جن میں تھوڑی غیرت بچی ھے ان کو تو اس کے ساتھ زندہ رہنے دیں’
    آپ مھجے بے شک جواب نہ دیں کیونکہ میں تو بزدل لوگوں کے ساتھ بات کرنا بھی گورا نہیں کرتا ‘گڈ باے

  30. saleem raza says:

    hypocrite said:
    saleem raza sahib

    نوازش. بزدل تو میں ہوں اور اسکا کھلے دل سے اعتراف کرتا ہوں
    ———————————————————————-
    آپ بزدل ھیں ،لیکن آپنے اندر تھوڑی اخلاقی جرات تو پیدا کریں ، فورم پر آپ لوگ دن رات لکچر دیتے نہیں تھکتے
    ھم یہ نہیں کر ریے ھم وہ نہیں کر ریے ، جس بندے نے بکواس کی تھی ؛آپکی اتنی جرت تو نہیں ھوئی کہ آپ اس
    کی مزامت ہی کردیتے ؛ لیکن آپ قسمت اور انقلاب کا رونا روتے نہیں تکھتے ؛ انقلاب بھائی سے معزرت کے ساتھ ۔۔
    اگر ہر بندہ غلط کو غلط کہنے کی جرات رکھتا تو آج ھمارا وطن اس حال میں نہ ھوتا۔

  31. hypocrite says:

    Saleem raza sahib

    مہربانی اور شکریہ
    چونکےمیں بزدل اور بے غیرت ہوں لہٰذا مجھ کو اپنے آپ سے تو بہتری کی کوئی امید نہیں ہے
    اخلاقی جرات بھی نہیں ہے
    اب دوا اور دعا دونوں کا وقت نکل چکا ہے
    مجھ کو بھی نکل جانا چاھیے

  32. hypocrite says:

    Saleem sahib

    No more lectures from me on this or any other forum. I dont deserve to give any lectures

    ملک اور دوستوں کی باگ دوڑ اور بھلائی انکے ذمے جو اس کے اہل ہیں

    میری آنکھیں کھولنے کا شکریہ

  33. Bawa says:

    @ saleem raza

    رضا بھائی. آپ غلط نہ کریں. ہائی پوکرئیٹ ہمارے بہت ہی قابل احتام بھائی ہیں. اپ نے شاید انکے کومنٹس کو غلط سمجھا ہے

    @ hypocrite

    بھائی جی. رضا کی طرف سے میں معافی کا خواستگار ہوں

  34. Bawa says:

    @ hypocrite
    Saleem sahib

    No more lectures from me on this or any other forum. I dont deserve to give any lectures

    ملک اور دوستوں کی باگ دوڑ اور بھلائی انکے ذمے جو اس کے اہل ہیں

    میری آنکھیں کھولنے کا شکریہ

    ……………………………………………….

    بھائی جی. درخواست ہے کہ آپ کہیں نہیں جائیں گے اور ہمیں ہماری غلطیوں پر معاف کر دیں گے. اس کام کے آپ ہی اہل ہیں

    بہت شکریہ

  35. hypocrite said:

    Saleem sahib

    No more lectures from me on this or any other forum. I dont deserve to give any lectures

    ملک اور دوستوں کی باگ دوڑ اور بھلائی انکے ذمے جو اس کے اہل ہیں

    ——————————————————————–

    اسلام و علیکم
    ہپوکریٹ بھائی صاحب . سلیم رضا کی بات کا غصہ مت کیجئے گا میرے خیال میں اسے صحیح بات کا پتا نہیں .اس کے لئے معزرت

    اور دوسرا ہم آپ کو جانے نہیں دیں گے. پہلےہی کافی سارے دوست جا چکے ہیں . آپ ہمیں جو مرضی کہیں ہم اف نہیں کریں گے . آپ ان چند لوگوں لوگوں میں سے ہیں جن سے ہم بہت اچھی انگریزی کے علاوہ بھی بہت اچھی باتیں بھی سیکھتے ہیں.

    سلیم بھائی آئندہ کبھی کسی پر غصہ ہو تو ہم پر نکال لیا کریں مہربانی ہو گی.

  36. hypocrite says:

    Bawa sahib and Revolution sahib

    Please dont apologize. I am already ashamed of my behaviour and your apology makes me feel even more guilty of my lowly life.

    I am not upset at all with what Saleem Raza sahib has said. I never get upset whenI face truth and what Saleem Sahib has said is nothing but outright truth. All Saleem sahib did was that to show me my own ugly face and pathetic character.

    As I didnt read what Peja sahib wrote to bawa sahib, I had no right to keep on putting pressure on bawa sahib. Moreover I didnt had the audacity to condemn PejaMistri sahib for his outburst nor I have any faith or courage to do something good about my country.

    You both are very decent gentlemen and are worthy of a long lasting friendship and those who have you as friends are truly rich and those who support you are your real friends.

    باقی رہے نام الله کا

  37. Bawa says:

    I Had Ray Davis’s Job, in Laos 30 Years Ago

    Same Cover, Same Lies

    By ROBERT ANDERSON

    The story of Raymond Allen Davis is one familiar to me and I wish our government would quit doing these things – they cost us credibility.

    Davis is the American being held as a spy working under diplomatic cover out of our embassy in Islamabad, Pakistan. You can understand why foreign countries no longer trust us and people are rising up across the Middle East against the Great Satan.

    In the Vietnam War the country of Laos held a geo-strategic position, as does Pakistan does to Afghanistan today. As in Pakistan, in Laos our country conducted covert military operations against a sovereign people, using the CIA.

    I was a demolitions technician with the Air Force who was reassigned to work with the CIA’s Air America operation in Laos. We turned in our military IDs cards and uniforms and were issued a State Department ID card and dressed in blue jeans. We were told if captured we were to ask for diplomatic immunity, if alive. We carried out military missions on a daily basis all across the countries of Laos, Cambodia, Thailand and Vietnam.

    We also knew that if killed or captured that we would probably not be searched for and our families back home in the U.S. would be told we had been killed in an auto accident of some kind back in Thailand and our bodies not recovered.

    Our team knew when the UN inspectors and international media were scheduled to arrive – we controlled the airfields. We would disappear to our safe houses so we could not be asked questions. It was all a very well planned operation, 60 years ago, involving the military and diplomats out of the US Embassy. It had been going on a long time when I was there during the 1968 Tet Offensive. This continued for a long time, until we were routed and had to abandon the whole war as a failure.

    In Laos the program I was attached to carried out a systematic assassination of people who were identified as not loyal to U.S. goals. It was called the Phoenix program and eliminated an estimated 60,000 people across Indochina. We did an amazing amount of damage to the civilian infrastructure of the country, and still lost the war. I saw one team of mercenaries I was training show us a bag of ears of dead civilians they had killed. This was how they verified their kills for us. The Green Berets that day were telling them to just take photos of the dead, leave the ears.

    Mel Gibson made a movie about all this, called Air America. It included in the background the illegal drug operation the CIA ran to pay for their operations. Congress had not authorized funds for what we were doing. I saw the drug operation first hand too. This was all detailed in The Politics of Heroin in Southeast Asia by Alfred McCoy. I did not connect all this until the Iran-Contra hearings when Oliver North was testifying about it. Oliver North was a leader of the Laos operation I was assigned to work with.

    Our country has a long history of these type programs going back to World War Two. We copied this from of warfare from the Nazis in WWII it seems. We justified it as necessary for the Cold War. One of the first operations was T.P. Ajax run by Kermit Roosevelt to overthrow the democratically elected government of Iran in 1953to take over their oil fields.

    In that coup the CIA and the State Department under the Dulles Brothers first perfected these covert, illegal and immoral actions. Historians have suggested that Operation T.P. Ajax was the single event that set in motion the political force of Islamic fundamentalism we are still dealing with today.

    Chalmers Johnson also a former CIA employee wrote a series of books too on these blowbacks that happen when the truth is held from the American public.

    If we had taken a different approach to our problems in those days an approach that did not rely on lying to our own and the people of other countries and killing them indiscriminately our country would not be in the disaster it is abroad today..

    I was young and foolish in those days of the Vietnam War, coveting my Top Secret security clearance, a big thing for an uneducated hillbilly from Appalachia. We saw ourselves much like James Bond characters, but now I am much wiser. These kinds of actions have immense and long reaching consequences and should be shut down.

    But I see from the Ray Davis fiasco in Pakistan that our government is still up to its old way of denying to the people of the world what everyone knows is true.

    When will this official hypocrisy end, when will our political
    class speak out about this and quit going along with the lies and tricks? How many more of our people and others will die in these foolish programs?

    Davis is in a bad situation now because most of the people of the world, as we see across the Middle East, are now aware of the lies and not going to turn their head anymore.

    I say “most” everyone knows, because our own public, the ones suppose to be in control of the military and CIA, is constantly lied to. It is so sad to see President Obama repeating the big lie.

    Robert Anderson lives in Albuquerque, N.M. He can be reached at citizen@comcast.net

    http://www.counterpunch.org/anderson02282011.html

  38. aftab says:

    Fozia Wahab’s son escapes kidnapping attempt

    Pakistan Peoples Party (PPP) leader Fozia Wahab’s son narrow escaped a kidnapping attempt late on Sunday night, Geo News reported.

    According to the sources, unidentified armed man abducted Barrister Murtaza Akram, son of Fozia Wahab, from D A Scheme 1. On the way the kidnappers left Murtaza on Super Highway after looting him when the car stopped owing to end of fuel.

    Talking to Geo News, Fauzia Wahab said that unidentified kidnappers attempted to abduct his son. Police has been reported about the incident, she added.

    http://www.geo.tv/3-7-2011/79046.htm

  39. aftab says:

    The downside of US friendship

    By Syed Talat Hussain

    IF familiarity breeds contempt then closeness can lead to a whole lot of complex problems. This is true at least of the closeness that Pakistan’s military establishment has sought to build with its counterpart in the US.

    The country’s top brass led by chief of army staff Gen Ashfaq Kayani has been studiously working on an elaborate network of engagement with the US. One result is deepened institutional ties. At the same time, and more importantly, this has produced a personalised relationship of the kind where leaders from both sides feel free to make direct demands on each other and expect the other to oblige.

    Adm Mike Mullen, chairman joint chiefs of staff, captured the spirit of this relationship recently in his testimony before the house sub-committee on appropriation and defence. There he spoke of the US national interest being served by furthering ties with the Pakistan Army.

    He also underscored his personal efforts in this regard: “…the relationship that we have with the Pakistan Army, I have spent an extraordinary personal time on [this] and it has improved remarkably in the last two to three years.”

    As evidence of this claim Adm Mullen cited a recent meeting between Gen Kayani and Gen David Petraeus (commander of the Isaf and US forces in Afghanistan) and said that there was a level of coordination across that border that “no one could imagine a couple of years ago”. He then went on to plead for sustaining this interaction over the long term.

    The perceived benefits of this new engagement are not a one-way street. Pakistan’s military establishment sees the US military as its strong lobby in Washington’s complex system of decision-making. Through this lobby, the army gets aid, equipment and the attentive ear of the White House.

    Moreover, staying engaged with Washington is an important counter-manouevre to India’s dangerous designs. This engagement is also meant to ensure that in the endgame in Afghanistan, Pakistan is not stranded in the wrong corner of the room full of hostile regional interests.

    But this upside of friendship now has a downside. The US administration wants Raymond Davis back safe and sound. Gen Kayani’s friends in Washington are now being sternly asked by their political bosses to use all their goodwill in this regard. They are willing to negotiate procedural matters with Pakistan but on the substantive issue of Davis’s immunity they refer to the red line drawn by the US president who called the killer of Pakistani citizens “our diplomat in Pakistan”.

    Simply put, the US wants the Pakistan Army and the ISI to shoot the trouble for them.

    This places Gen Kayani and his men in an unenviable domestic situation. While the matter of the US spy is in the courts, it has become an open secret that the courts are not the place where his fate shall be decided. Political leadership in Islamabad and Lahore and even foreign service officers state in off-the-record conversations that the final verdict has to come from the Pindi-Aabpara combine — a reference to the military and the ISI headquarters.

    This perception that the army holds the key to the Raymond Davis controversy is further promoted by a string of news reports that the ties between the ISI and CIA — an important strand in the bilateral intelligence-to-intelligence relationship — have been frayed to the point of a virtual break-up. This is an obvious pointer to where the US is applying the pressure for Davis’s release.

    How will the army deliver Davis to the US without running against popular sentiment and over the law of the land is the dilemma that does not lend itself to easy solutions.

    A behind-the-scenes deal where Davis is quietly flown out of Pakistan is no longer possible. All other options are complicated in that invariably these involve some form of exposure to the public eye that for weeks has been fixed on the issue and now is red with rage. But the US pressure shall not relent. In fact, it will mount on the army as Washington sees that politicians are too beholden to their constituencies to meet their demands.

    However, the army has its own problems. While it is not a representative institution, Gen Kayani has been keenly promoting the army as a force that does not move without popular consensus behind its back. Such has been the force of this projection that elected representatives see this as a slow-moving coup. For Gen Kayani to now underwrite a deal with the US on Davis would require a paradigm shift in public relations with the nation.

    Delivering the spy to Washington has other repercussions that Gen Kayani cannot ignore. In that case, he would be seen to be turning his face away from the ugly fact of CIA operations in Pakistan, which, from the looks of it, go much beyond keeping tabs on potential terrorists.

    A friendly gesture from Gen Kayani in response to unfriendly actions from Washington — intelligence operations against allies fall in that category — would be tantamount to indirectly endorsing them. No one from the army and the ISI has yet explained to the nation the size of the iceberg of CIA activities in Pakistan, whose small tip is Raymond Davis.

    Neither has there been any honest assessment of the stark intelligence failure in countering US activities on Pakistani soil. These are hard questions that Gen Kayani is expected to ask of Mullen and Leon Panetta, the CIA director. If he does not, and is seen ‘shooting the trouble’ for Washington he is unlikely to win medals at home. But not delivering is also not an option. A friend in need is a friend indeed is what the Americans are saying. The Pakistan Army high command has to choose its options carefully.

    http://www.dawn.com/2011/03/07/the-downside-of-us-friendship.html

  40. پی آئی اے کے مسافرطیارے کوانڈونیشیامیں زبردستی اتارلیاگیا

    Updated at 1830 PST

    سولاویسی . . . . . پی آئی اے کے مسافرطیارے کوانڈونیشیامیں زبردستی اتارلیا گیا۔ تفصیلات کے مطابق پی آئی اے کے مسافرطیارے کوانڈونیشیامیں زبردستی اتارلیاگیا ، طیارے کوانڈونیشیاکے صوبے سولاویسی کے شہرماکاسرمیں اتاراگیا ہے،پی آئی اے کے اس طیارے کوانڈونیشیاکی فضائی حدودمیں بلااجازت داخلے پراتاراگیا ۔طیارے کوانڈونیشیا فضائی حدود کی خلاف ورزی پر 2لڑاکاطیاروں نے اتارا ۔مقامی ایئرفورس چیف کے مطابقپی آئی اے کے اس طیارے میں54افرادسوارہیں اورضروری دستاویزات دکھانے پرطیارے کوجانیکی اجازت دی جائے گی۔پی آئی اے ترجمان کے مطابق انڈونیشیامیں پاکستانی سفارتخانے کواطلاع
    دے دی گئی۔

    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/07-03-2011/u64679.htm

  41. کراچی:پرتشدد واقعات میں ڈاکٹراور خاتون سمیت6 ہلاک، آٹھ زخمی

    Updated at 2140 PST

    کراچی…کراچی کے مختلف علاقوں میں فائرنگ اورپرتشدد واقعات میں ڈاکٹراور خاتون سمیت 6افراد ہلاک جبکہ8 سے زائد زخمی ہوگئے۔پولیس کے مطابق ناظم آباد کے علاقے پاپوش نگرمیں ریلوے پھاٹک کے قریب مسلح ملزمان نے گاڑی پر فائرنگ کردی سے جس سے کاشف نامی نوجوان ہلاک جبکہ زبیر زخمی ہوگیا۔ ۔قصبہ کالونی میں نامعلوم ملزمان کی فائرنگ ایک خاتون جاں بحق ہوگئی۔ کلفٹن برج پر مسلح ملزمان نے فائرنگ کر کے ایک شخص کو قتل کردیا۔ راشد منہاس روڈ پر الہ دین پارک کے قریب مسلح ملزمان نے گاڑی پر فائرنگ کر کے ڈاکٹر سید محمد آصف کو ہلاک کردیا اور با آسانی فرار ہوگئے۔ لیاری کے علاقے کھڈا مارکیٹ میں مسلح افراد نے فائرنگ کر کے یونس نامی شخص کو ہلاک کردیا۔اورنگی ٹاؤن کے علاقے بلوچ پاڑہ سے ایک شخص کی تشدد زدہ ملی جس کی شناخت نہیں ہوسکی۔ لیاری، لائنز ایریا، ناظم آباد، سر سید ٹاؤن، پراناحاجی کیمپ،گلستان جوہر اور بھٹائی آباد میں نامعلوم افراد نے فائرنگ کر کے 8 سے زائد افراد کو زخمی کردیا۔ رابطہ کرنے پر حکام نے جیو نیوز کو بتایا کہ ناظم آباد، راشد منہاس روڈ، کلفٹن اور لیاری میں ہلاکت کے واقعات ٹارگٹ کلنگ کا نتیجہ ہیں جن کی تحقیقات شروع کردی ہیں

    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/07-03-2011/u64698.htm

  42. فیصل آباد:سی این جی اسٹیشن کے قریب دھماکا،20افراد جاں بحق،100زخمی
    Updated at 1405 PST
    فیصل آباد…فیصل آبادکے علاقے سول لائنزمیں سی این جی اسٹیشن کے قریب دھماکے سے بیس افرادجاں بحق اور100سے زائد زخمی ہو گئے ۔پولیس کے مطابق دھماکا سول لائنز میں سی این جی اسٹیشن کے قریب ہوا۔پولیس کا کہنا ہے کہ دھماکا خیز مواد ایک کار میں رکھا گیا تھا ،دھماکا اس قدر شدید تھا کہ اس کی آوازمیلوں دور تک سنی گئی، قریب کھڑی گاڑیوں میں آگ لگ گئی اور قریبی عمارتوں کو بھی نقصان پہنچا،دھماکے سے پی آئی اے کے دفتر کی عمارت کا ایک حصہ گر گیا۔ دھماکے کے مقام پر چار فٹ گہراگڑھا پڑ گیا ہے ،دھماکے کے فوری بعد امدادی کارروائیاں شروع کردی گئیں اورزخمیوں کو اسپتال منتقل کیا گیا ۔دھماکے کے قریب حساس ادارے کے دفاتر بھی واقع ہیں جنہیں کافی عرصے سے دھمکیاں موصول ہورہی تھیں ،دھماکے کے مقام سے مشکوک گاڑی کا ملبہ اٹھا لیا گیا ہے۔ابتدائی شواہد کے مطابق پولیس اسے دہشت گردی کی کارروائی قرار دے رہی ہے ۔جاں بحق ہونیو الوں میں پی آئی اے کی ایک ملازمہ بھی شامل ہیں ،اس افسوسناک واقعے کے بعد انجمن تاجران نے ایک روز کیلئے کاروبار بند رکھنے کا اعلان کیا ہے۔
    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/08-03-2011/u64761.htm

  43. عوامی محبت کے تقاضے… صبح بخیر…ڈاکٹر صفدر محمود

    تحریک آزادی اور آل انڈیا کانگرس کی ممتاز رکارکن اور ہندوستان کی ایک سابق صوبائی گورنر سروجنی نائیڈو نے ایک دلچسپ واقعہ لکھا ہے۔ سروجنی نائیڈو کا کہنا ہے کہ کانگرس کو مہاتما گاندھی کی سادگی، بظاہر درویشی اور عوامی محبت بہت مہنگی پڑتی تھی۔ وہ جب ٹرین سے سفر کرتے تھے تو ان کے لئے تھرڈ کلاس کا پورا ڈبہ ریزرو کروایا جاتا تھا جس میں مسافروں کے نام پر کانگرسی کارکنوں کو بھرا جاتا تھا۔ گاندھی کے مقابلے میں قائداعظم فرسٹ کلاس میں سفر کرتے تھے جہاں ان کے لئے اور مس فاطمہ جناح کے لئے دو نشستیں ریزرو کروائی جاتی تھیں۔ اس طرح قائداعظم ،گاندھی کے مقابلے میں کئی گنا کم خرچ کرکے منزل مقصود پر پہنچ جاتے تھے۔ سروجنی نائیڈو گاندھی کی اس عوامی محبت کو سیاسی شعبدہ بازی قرار دیتی ہے۔ قائداعظم اندر باہر، ظاہر باطن میں ایک ہی جیسے تھے اس لئے وہ سیاسی شعبدہ بازی کو ناپسند کرتے تھے۔ بیورو کریسی حکمرانوں کو خوش کرنے کے لئے تجاویز دیتی رہتی ہے۔ قیام پاکستان کے بعد گورنر جنرل کو مشرقی پاکستان کے دورے پر جانا تھا چنانچہ فائل پر تجویز کیا گیا کہ قائداعظم کی علالت کے سبب ان کے لئے برٹش ایئرلائن کا طیارہ چارٹر کیا جائے جس پر پانچ سو پونڈ صرف ہوں گے۔ قائداعظم نے فائل پر یہ لکھ کر تجویز مسترد کر دی کہ میرے ملک کا خزانہ اس طرح کے اخراجات کا متحمل نہیں ہوسکتا۔ وہ شدید علالت کے سبب زیارت میں زندگی کے آخری ایام گزار رہے تھے تو امریکہ میں پاکستانی سفیر اور قائداعظم کے دوست اصفہانی نے واشنگٹن سے ماہر ڈاکٹر بھجوانے کی پیشکش کی توقائداعظم نے قومی خزانے پر بوجھ قرار دے کر معذرت کرلی۔ ہمارے سیاسی قائدین اور حکمران صبح و شام قائداعظم کو یاد کرکرکے تڑپتے ہیں لیکن ان کی مانند قومی خزانے کو امانت سمجھ کر نہیں بلکہ شیر مادر سمجھ کر بے دریغ استعمال کرتے ہیں اور ساتھ ہی ساتھ عوام سے محبت کی شعبدہ بازی کے دعوے بھی کرتے رہتے ہیں۔ محترم غلام حیدر وائیں مرحوم نہایت مخلص کارکن، دیانتدار اور خدمت کے جذبے سے معمور حکمران تھے۔ وہ وزیراعلیٰ بنے تو ان کی درویشی کا بہت چرچا ہوا کیونکہ وہ میاں چنوں میں ڈھائی مرلے کے مکان سے وزیر اعلیٰ ہاؤس پہنچے تھے۔ ایک رات انہوں نے محترم جسٹس ذکی الدین پال، محترم مجید نظامی اور مجھے کھانے پر بلایا ۔ دوران گفتگو میں نے عرض کیا کہ وائیں صاحب آپ کی درویشی کا تقاضا ہے کہ وزیراعلیٰ ہاؤس کے کروفر اور اخراجات میں بے تحاشا کمی کی جائے، آپ کے پروٹوکول پر درویشانہ رنگ چڑھایا جائے تاکہ آپ کی درویشی کا کچھ فائدہ عوامی خزانے کو بھی پہنچے۔میں دیکھ رہا ہوں کہ وزیراعلیٰ ہاؤس کے وہی مغلانہ اور شہنشاہانہ انداز ہیں، آپ جی او آر کے اندر بھی پروٹوکول کی گاڑیوں کے بغیر سفر نہیں کرتے۔ ہم کھانا کھا کر باہر نکلے تو جسٹس پال میرا بازو پکڑ کر کہنے لگے ”ڈاکٹر صاحب تمہارا نوکری کرنے کا ارادہ نہیں لگتا“۔ میں اس زمانے میں صوبائی سیکرٹری پایا جاتا تھا۔

    اس میں کوئی شبہ نہیں کہ میاں شہباز شریف ذاتی زندگی میں سادگی کے اصولوں پر عمل کرتے ہیں، وہ غرباء اور محروم طبقوں کی خدمت کا جذبہ رکھتے ہیں اور ظلم و زیادتی پر تڑپ اٹھتے ہیں۔ وہ ہر روز پاکستان کو قائداعظم اور اقبال کا پاکستان بنانے کا اعلان بھی کرتے ہیں۔ ان کے اسی جذبے کے پیش نظر مجھے اخبارات میں یہ پڑھ کر صدمہ ہوا کہ وزیراعلیٰ ہاؤس کا گزشتہ تین برس کا خرچہ 190ارب (ایک سو نوے ارب) ہے۔ وزیراعلیٰ نے تین مقامات کو سرکاری طور پر کیمپ آفس قرار دیا ہوا ہے جس کا سادہ سا مطلب یہ ہے کہ ان مقامات کا سارا خرچہ غریب خزانے سے ادا ہوتا ہے، رائے ونڈ پیلس پر تین سو سرکاری اہلکار ڈیوٹی دیتے ہیں، وزیراعلیٰ کے طیارے کی روزانہ اڑانوں کا خرچہ لاکھوں روپے روزانہ ہے اور ایک انگریزی اخبار کے مطابق رائے ونڈ پیلس کی سکیورٹی پر پچاس لاکھ روپے ماہانہ خرچ ہو رہے ہیں۔ میں نے فضول خرچی کی دیگ سے فقط چند دانوں کا ذکر کیا ہے کیونکہ میرا جی چاہتا ہے کہ وزیراعلیٰ میاں شہباز شریف کی درویشی کے کچھ فائدے قوم کو بھی پہنچے جو نان جویں کو ترس رہی ہے اور جس کے غم میں وزیراعلیٰ صاحب کی آنکھیں اکثر بھیگ جاتی ہیں۔ مجھے یقین ہے کہ نظرثانی کرکے ان اخراجات سے کئی ارب بچائے جاسکتے ہیں جن سے مزید دانش سکول کھولے جاسکتے ہیں۔ سچی بات یہ ہے کہ حواری اور درباری حکمرانوں کو خوشامد کا عادی بنا دیتے ہیں چنانچہ انہیں مخلص تجاویز بھی تنقید کے پتھر لگتی ہیں۔ و زیراعلیٰ صاحب کے ایک قریبی اہلکار نے کچھ عرصہ قبل مجھے ایک فنکشن میں مدعو کیا جہاں ایسے طلبہ طالبات نے تاثرات سنانے تھے جنہوں نے بورڈ کے امتحانات میں پوزیشنیں حاصل کی تھیں اور جنہیں سرکاری خرچ پر مختلف ممالک کے دورے پر بھیجا گیا تھا۔ میں نے اس ”افسر“ سے کہا کہ میں اس بات کا شدید حامی ہوں کہ پوزیشنیں لینے والے طلبہ و طالبات کی عزت افزائی کی جائے۔ وزیراعلیٰ انہیں مری میں وزیراعلیٰ ہاؤس میں مہمان رکھیں، پولیس سے سیلوٹ کروائیں اور انعامات دیں اور مستحق طلبہ کی اعلیٰ تعلیم کا سرکاری انتظام کریں۔(جاری ہے)
    http://www.jang.com.pk/jang/mar2011-daily/08-03-2011/col3.htm

  44. Some 37.2 million votes that were registered in the 2007 are declared fake.

    According to a statement issued by the Election Commission of Pakistan (ECP), National Database and Registration Authority did not authenticate 37.2 million voters out of 82 million registered voters in the votoer lists of 2007.

    NADRA has also registered 3.65 million new voters in its data base that brought the total figure of registered voters at 85.4 million. For the verification of these votes NADRA will launch a door-to-door campaign in July 2011.

    The ECP has ordered that voter lists be comleted by December this year

    http://dunyanews.tv/index.php?key=Q2F0SUQ9MiNOaWQ9MjE4MzY=

  45. کراچی :فائرنگ کے واقعات ، دوسیاسی کارکنوں سمیت4افراد ہلاک

    Updated at 0500 PST

    کراچی … کراچی میں فائرنگ کے مختلف واقعات میں سیاسی جماعتوں کے دوکارکنوں سمیت 4افراد ہلاک اور 10 زخمی ہوگئے ۔پولیس کے مطابق قصبہ کالونی میں نامعلوم افراد نے فائرنگ کر کے ایک نوجوان عمران آفریدی کو قتل کردیا ۔ پختون اسٹوڈنٹس فیڈریشن کے ترجمان کے مطابق مقتول ان کی صوبائی کمیٹی کا رکن تھا ۔ بنارس کے قریب مسلح افراد نے بس پر فائرنگ کردی جس سے ایک شخص ہلاک اور چارافراد زخمی ہوگئے ۔ گلستان جوہر میں جوہر کمپلیکس کے قریب مسلح افراد نے فائرنگ کر کے 30 سالہ منور اقبال کو قتل کردیا ۔ پولیس حکام کے مطابق یہ واقعات ٹارگٹ کلنگ کا نتیجہ ہیں ۔ رات گئے تھانہ عیدگاہ کی حدود میں واقع علاقے بھیم پورہ میں نامعلوم ملزموں کی فائرنگ سے سیاسی جماعت کا کارکن30 سالہ مشتاق ہلاک ہوگیا،جبکہ رنچھوڑ لائن کے علاقے میں بھی مسلح ملزمان کی فائرنگ سے دو افراد زخمی ہوئے،جس کے بعد علاقے میں صورتحال کشیدہ ہوگئی۔

    http://www.jang.com.pk/jang/mar2011-daily/09-03-2011/u64828.htm

  46. عوامی محبت کے تقاضے …صبح بخیر…ڈاکٹر صفدر محمود.. (گزشتہ سے پیوستہ)

    میں غیرملکی دورے پر ایک کروڑ کے لگ بھگ خرچ کو فضول خرچی سمجھتا ہوں اور محسوس کرتا ہوں کہ اس رقم سے حکومت ہزاروں محروم طلبہ کو تعلیم کے زیور سے آراستہ کرسکتی ہے۔ میری بات سن کر وہ افسر پریشانی کے سمندر میں غوطے کھانے لگا۔ اس نے یہ کہہ کر خلاصی کروائی کہ سر آپ ہرگز نہ آئیں۔ آپ نے یہ باتیں لکھ دیں تو میری نوکری خطرے میں پڑ جائے گی۔ ظاہر ہے کہ ایسی تقریبات میں بلانے کا مقصد تعریفی کالم لکھوانا ہوتا ہے۔ اندھی تعریف وہ کریں جنہوں نے ”مقاصد“ کا رس نچوڑنا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ حکمرانوں کے ”عظیم الشان منصوبوں“ پر صرف تعریف کے پھول نچھاور کئے جاتے ہیں کیونکہ اس محفل میں تجویز بھی تنقید بن کر کانٹے کی مانند چبھتی ہے۔ حکمرانوں کی قومی خدمت کا مقصد رضائے الٰہی نہیں بلکہ رضائے ووٹر کا حصول ہوتا ہے چنانچہ اس پر بھی کروڑوں روپے پانی کی مانند بہا دیئے جاتے ہیں۔ بے شک دانش سکولوں کا قیام ایک عظیم کارنامہ ہے۔ میں نے اس حوالے سے فقط یہ تجویز لکھی تھی کہ سرکاری زمین پر باسٹھ کروڑ روپے خرچ کرکے دانش سکول کا تاج محل تعمیر کرنے کی بجائے اس پر دس پندرہ کروڑ روپے خرچ کریں اور رقم بچا کر دوسرے اضلاع میں بھی اسی طرح کے سکول قائم کریں تاکہ سارے صوبے کے غریب اور لائق طلبہ و طالبات معیاری تعلیم سے مستفید ہوسکیں۔ یہ بات تعریف کے نقارخانے میں طوطی کی آواز تھی جو دب کر رہ گئی۔ ایک واقف حال سے میں نے پوچھا کہ دانش سکول کی تقریب پر تقریباً کتنا خرچ ہوا۔ جواب ملا پنجاب حکومت،ضلعی حکومت اور پرائیویٹ سیکٹر سے لی گئی رقم تقریباً دو کروڑ روپے بنتی ہے۔ دور دراز کے علاقوں میں تعمیر کئے گئے پانچ سکولوں کے اشتہارات قومی اخبارات کے نصف نصف صفحوں پر سجانے کا خرچ لاکھوں، کروڑوں میں ہوگا۔ میں یہ روداد تشہیر سن کر سوچنے لگا، اے کاش! یہ رقم غریب طلبہ کی تعلیم پر خرچ کی جاتی جن کی بڑی تعداد و سائل کے فقدان کے سبب تعلیم سے محروم رہ جاتی ہے یا ان سرکاری سکولوں کو دی جاتی جہاں بچوں کو ٹاٹ بھی میسر نہیں ہیں۔ پنجاب میں ہزاروں سکول استادوں اور بنیادی سہولیات سے محروم ہیں۔ بہت سے سکول بند پڑے ہیں، کئی سکولوں کی عمارتوں پر مقامی بااثر حضرات کا قبضہ ہے، بعض میں سیلاب زدگان کی امداد کا سامان ڈمپ کیا گیا ہے اور بعض کوڑے کرکٹ کا خزانہ بنے ہوئے ہیں اور ان کے مناظر ٹی وی پر بھی دکھائے گئے ہیں۔ ظاہر ہے کہ یہ سارے سرکاری سکول غریب بچوں کے لئے ہیں۔ ہمارے بچپن اور زمانہ طالب علمی میں سرکاری سکول اس قدر معیاری ہوتے تھے کہ آج ملک کے سیاسی، تعلیمی، سرکاری، سائنسی، صنعتی، عدالتی، ادبی بلکہ ہر افق پر چھائے ہوئے لوگوں کی بہت بڑی تعداد انہی سکولوں کی تربیت یافتہ ہے۔ اے کاش! حکمران اس طرف توجہ دیں اور سرکاری سکولوں کی کھوئی ہوئی عظمت بحال کریں اگر حکمرانوں کے دلوں میں واقعی ہی غریب کی خدمت کی موم بتی روشن ہے تو یہ خدمت کا بہترین ذریعہ ہے میں کبھی کبھی اپنے آپ کو کوستا ہوں کہ میں نے تعلیم کے حوالے سے سرسید کو کیوں اپنا آئیڈیل بنا لیا۔ ایک شخص نے سرسید کو خوبصورت پینٹنگ تحفے میں دی۔ سرسید نے اسے فروخت کرکے رقم علی گڑھ کالج کے فنڈمیں جمع کروا دی۔ علاقے کے ایک رئیس نے سرسید کو دعوت پر بلایا۔ سرسید نے کہا آپ نے جتنی رقم میری دعوت پر خرچ کرنی ہے وہ رقم علی گڑھ کالج کے فنڈ میں عطیہ کر دیں اور سمجھیں کہ میری دعوت ہوگئی۔ آج قوم کو تعلیم سے منور کرنے کے لئے اسی جذبے کی ضرورت ہے اور سچی بات یہ ہے کہ مجھے وہ جذبہ دور دور تک نظر نہیں آتا۔ ا لبتہ رنگ بازی بہت ہے۔

    http://www.jang.com.pk/jang/mar2011-daily/09-03-2011/col8.htm

  47. saleem raza says:

    انقلاب بھائی السلام و علیکم ؛ کیا حال ھے ، آپ کا لوگوں کو مارنے کا ٹارگٹ ابھی تک پورا نہیں ھوا،
    کہیں تو میں بھی توپ لے کر مدد کو آجاوں ۔ مھجے تو عاشق اعوان سے عشق ھو گیا تھا، لیکن جب مھجے پتہ چلا ھے
    کہ وہ آپ کے علاقے کی ھے ، آور آپ کے ساتھ ساتھ پڑتی بھی رہی ھے ۔میری تو بولتی بند ھوگی تھی ، میں عاشق اعوان سے عشق کرنے کی معزرت چایتا ھوں ، بھائی آپ تو روزانہ 10 یا 12 بندے نہ پھڑکا ، آپ کو آ یسکریم بھی
    آچھی نہیں لگتی
    :)

  48. aftab says:

    37.2 million votes declared bogus

    According to a statement issued by the Election Commission of Pakistan (ECP), National Database and Registration Authority did not authenticate 37.2 million voters out of 82 million registered voters in the voter lists of 2007.

    NADRA has also registered 3.65 million new voters in its data base that brought the total figure of registered voters at 85.4 million. For the verification of these votes NADRA will launch a door-to-door campaign in July 2011.

    The ECP has ordered that voter lists be comleted by December this year.

    http://dunyanews.tv/index.php?key=Q2F0SUQ9MiNOaWQ9MjE4MzY=

  49. saleem raza said:
    انقلاب بھائی السلام و علیکم ؛ کیا حال ھے ، آپ کا لوگوں کو مارنے کا ٹارگٹ ابھی تک پورا نہیں ھوا،
    کہیں تو میں بھی توپ لے کر مدد کو آجاوں

    ———————————————————-
    سلیم بھائی اسلام و علیکم

    مجھے کراچی کے لوگوں کی اتنی ہی فکر ہے جتنی پاکستان کے کسی بھی اور حصے میں رہنے والوں کی ہے . کراچی کو ہمارے حکمرانوں نے درندوں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا ہے جن کا جب دل کرتا ہے جتنے مرضی بندے مار دیتے ہیں. رحمان ملک جس کی ذمہ داری لوگوں کی حفاظت ہے وہ بھی ان کے ساتھ ہے اور آج ہی بھاگم بھاگ لندن کالیا کو منانے آیا ہے. لیکن وقت ایک جیسا نہیں رہتا انشا الله ان درندوں اس دنیا میں بھی اور آخرت میں بھی اس خون کا حساب لیا جائے گا.

  50. ’پاکستان میں ستر لاکھ بچے پرائمری تعلیم سے محروم‘

    برطانوی حکومت کے تعاون سے پاکستان میں تعلیم کے نظام کو بہتر بنانے والی پاکستان ایجوکیشن ٹاسک فورس نے سال دو ہزار گیارہ کو تعلیمی ایمرجنسی کا سال قرار دیا ہے اور کہا ہے کہ ملک کا تعلیمی نظام ہنگامی صورتحال کا شکار ہے جس سے کروڑوں بچوں کا مستقبل داؤ پر لگا ہوا ہے۔

    ایجوکیشن ٹاسک فورس کی طرف سے ’پاکستان کی تعلیمی ایمرجنسی‘ کے عنوان سے جاری کی گئی اس رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پاکستان کی اس تباہ کن ایمرجنسی کے اثرات انسانی، سماجی اور معاشی سطح پر موجود ہیں اور اس بحران سے ملک کی سالمیت کو خطرہ لاحق ہے۔

    اس رپورٹ کے مطابق پاکستان تعلیم کے حوالے سے اپنی بین الاقوامی ذمہ داریاں نبھانے میں اب تک ناکام رہا ہے اور تقریباً ستر لاکھ بچے پرائمری تعلیم سے محروم ہیں اور یہ تعداد لاہور شہر کی پوری آبادی کے برابر ہے۔

    کلِک بلوچستان: ’تعلیم کا مستقبل خطرے میں‘

    کلِک پاکستان میں نئی تعلیمی پالیسی کا اعلان

    کلِک پشاور میں سکولوں پر حملوں میں اضافہ

    کلِک سکول سکیورٹی کے ناکافی انتظامات

    نامہ نگار حفیظ چاچڑ کے مطابق رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ دنیا میں جتنے بچے اس وقت پرائمری تعلیم سے محروم ہیں ان کی تقریباً دس فیصد تعداد پاکستان میں ہے اس طرح تعلیم سے محروم بچوں کی تعداد کے حوالے سے پاکستان دنیا میں دوسرے نمبر پر ہے۔

    ٹاسک فورس کے رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ہائی سکولوں میں داخلے کی شرح محض تئیس فیصد ہونے کی وجہ سے پاکستان بین الاقوامی اور اپنی آئینی ذمہ داریوں کو پورا کرنے میں اور بھی پیچھے ہے۔ اور آج بھی ایسے بچوں کی تعداد ڈھائی کروڑ ہے جو تعلیم حاصل نہیں کر پا رہے ہیں۔

    دنیا میں چند غریب ترین ممالک میں پرائمری تعلیم حاصل کرنے والے بچوں کی تعداد پاکستان کے مقابلے میں کہیں زیادہ ہے۔اس رپورٹ کے مطابق پاکستان میں تعلیمی مواقع کم نہیں ہیں بلکہ اس کی ناہموار تقسیم ایک بڑا مسئلہ ہے۔ ملک کے بیس فیصد امیر ترین شہری غریب ترین شہریوں کے مقابلے میں سات سال زیادہ تعلیم حاصل کر رہے ہیں۔ دوسری طرف تیس فیصد پاکستانی انتہائی تعلیمی غربت میں زندگی بسر کر رہے ہیں اور وہ بمشکل دو سال تک سکول جا پاتے ہیں۔

    ایجوکیشن ٹاسک فورس کا کہنا ہے کہ دنیا میں چند غریب ترین ممالک میں پرائمری تعلیم حاصل کرنے والے بچوں کی تعداد پاکستان کے مقابلے میں کہیں زیادہ ہے۔ بھارت، بنگلہ دیش اور سری لنکا اپنے اپنے تعلیمی اہداف مقررہ مدت میں حاصل کرنے کی جانب گامزن ہیں۔

    رپورٹ کے مطابق پاکستان اپنی قومی پیداوار کا کم از کم چار فیصد تعلیم پر خرچ کرنے کا پابند ہے۔ لیکن حالیہ برسوں کے بجٹ میں یہ شرح بڑھنے کے بجائے کم ہو رہی ہے یعنی گزشتہ برس صرف دو فیصد تعلیم پر خرچ کیا گیا۔ رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ پاکستان کو اپنے تعلیمی اہداف کو پورا کرنے کےلیے سالانہ سو ارب روپے درکار ہوں گے۔

    ٹاسک فورس کا کہنا ہے کہ حکومت سرکاری سکولوں پر قومی پیداوار کا محض ڈیڑھ فیصد خرچ کر رہی ہے اور یہ خرچ اس سبسڈی سے بھی کہیں کم ہے جو پی آئی اے، پاکستان سٹیل ملز اور پیپکو کو دی جاتی ہے۔

    پاکستان اپنی قومی پیداوار کا کم از کم چار فیصد تعلیم پر خرچ کرنے کا پابند ہے۔ لیکن حالیہ برسوں کے بجٹ میں یہ شرح بڑھنے کے بجائے کم ہو رہی ہے یعنی گزشتہ برس صرف دو فیصد تعلیم پر خرچ کیا گیا۔ رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ پاکستان کو اپنے تعلیمی اہداف کو پورا کرنے کےلیے سالانہ سو ارب روپے درکار ہوں گے۔
    رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ تیس ہزار سے زیادہ سکول مخدوش حالت میں یا اس کی عمارتوں کو مرمت کی اشد ضرورت ہے جبکہ اکیس ہزار سے زیادہ سکول کھلے آسمان تلے چل رہے ہیں اور بہت سے سکولوں میں بنیادی سہولیات بھی میسر نہیں ہیں۔ صرف پینسٹھ فیصد سکولوں میں پینے کا پانی میسر ہے، باسٹھ فیصد میں بیت الخلاء کی سہولت موجود ہے، اکسٹھ فیصد کی چاردیواری ہے اور صرف انتالیس فیصد میں بجلی کا نظام موجود ہے۔

    ایجوکیشن ٹاسک کے مطابق اتنی پیچیدہ اور مایوس کن تعلیمی صورتحال سے نمٹنے کےلیے ضروری ہے کہ ہر سطح کے رہنماء، وزیراعظم اور وزراء اعلیٰ سے لے کر سکول کے ہیڈ ماسٹر تک سب کو مل کر ایسا تعلیمی نظام وضع کریں جس کے نتائج خود اس کی ترجمانی کریں۔

    اس رپورٹ میں تجاویز دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ پاکستان کو اپنے تعلیمی اہداف حاصل کرنے کےلیے کچھ اضافی اخراجات کرنا ہوں گے۔ معاشی دباؤ کی موجودہ صورتحال میں اولین ترجیح یہ ہونی چاہیئے کہ سال کے بجٹ میں تعلیمی اخراجات موجودہ سطح پر بحال رکھنے کو یقینی بنایا جائے۔
    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2011/03/110309_pak_education_taskforce_rh.shtml

  51. aftab says:

    PPP to observe ‘Protest Day’ against SC on Friday

    Pakistan Peoples Party Sindh’s General Secretary Taj Haider has said that his party would observe ‘Protest Day’ on Friday against Supreme Court.

    Haider also appealed people to shut their businesses, shops and transport on said day.

    It is pertinent to mention here that Supreme Court Thursday declared the appointment of Dedar Hussain Shah as Chairman NAB null and void. Former Justice Deedar Hussain Shah was appointed as Chairman NAB on October 08, 2010.

    http://www.geo.tv/3-10-2011/79180.htm

  52. Mujtaba says:

    PPP to observe ‘Protest Day’ against SC on Friday

    Pakistan Peoples Party Sindh’s General Secretary Taj Haider has said that his party would observe ‘Protest Day’ on Friday against Supreme Court.

    Haider also appealed people to shut their businesses, shops and transport on said day.

    It is pertinent to mention here that Supreme Court Thursday declared the appointment of Dedar Hussain Shah as Chairman NAB null and void. Former Justice Deedar Hussain Shah was appointed as Chairman NAB on October 08, 2010.
    —————-

    lakh lakh laanat …. beghairato …

  53. دیدار حسین شاہ کودوبارہ چیئرمین نیب مقرر کرنیکا حکومتی فیصلہ

    Updated at 2241 PST

    اسلام آباد…حکومت نے کا دیدارحسین شاہ کودوبارہ چیئرمین نیب مقرر کرنیکا اصولی فیصلہ کیا ہے۔ذرائع کے مطابق حکومت نے یہ فیصلہ جسٹس دیدار حسین شاہ کوسپریم کورٹ کے حکم پر ہٹائے جانے اور بعد ازاں ان کے چارج چھوڑنے کے بعد کیا ۔سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد پیپلز پارٹی نے فیصلے کیخلاف یوم احتجاج منانے کا اعلان کیا اورعوام سے اپیل کی کہ عوام جمعے کے روز کاروبار،دکانیں اور ٹروانسپورٹ بند رکھیں۔واضح رہے کہ سپریم کورٹ کے سینئر جج جسٹس جاوید اقبال کی سربراہی میں جسٹس محمد راجا فیاض اور جسٹس آصف سعید کھوسہ پر مشتمل بینچ نے چیئرمین نیب جسٹس ریٹائرڈ دیدار حسین شاہ کی تقرری کے خلاف اپوزیشن لیڈر چوہدری نثار اورشہری شاہد اورکزئی کی آئینی درخواستوں پر مختصر فیصلہ سناتے ہو ئیچیئرمین نیب جسٹس ریٹائرڈ دیدار حسین شاہ کی تقرری کو غیر آئینی اور غیر قانونی قراردے کر انہیں چارج چھوڑنے کا حکم دیا تھا ۔

    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/10-03-2011/u65032.htm

  54. saleem raza said:
    باواجی ،انقلاب بھای۔ فارغ بھای سب کو السلام و علیکم۔

    ————————————————-

    و علیکم السلام سلیم بھائی تمام دوستوں کو سلام

    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/10-03-2011/u65031.htm

    پی پی پی کا ہرتال کو کامیاب بنانے کے لئے تمام تعلیمی ادارے بند رکھنے کا فیصلہ.

  55. Breaking News:

    Tsunami hits north-eastern Japan after massive quakeClick to play

    Eric Due from the Japan Times describes the moment the quake struck

    A massive earthquake has hit the northeast of Japan triggering a tsunami that has caused extensive damage.

    Japan’s TV showed cars, ships and even buildings being swept away the Fukushima prefecture, after the 8.8 magnitude earthquake.

    Officials said a wave as high as 6m (20ft) could strike the coast.

    The quake struck about 250 miles (400km) from Tokyo at a depth of 20 miles, shaking building in the capital for several minutes.

    The tremor at 1446 local time (0546 GMT) was followed by a series of powerful aftershocks.

    یا الله رحم ٹی وی پر جاپان میں آنے والا سونامی براہ راست دکھا رہے ہیں جہاں گاڑیاں اور انسان بہتے جا رہے ہیں.

  56. پاکستان کے سیاستدانوں پر دنیا بھر کی لعنت . جتنا صوبائی تعصب یہ پھیلاتے ہیں دنیا میں کوی نہیں پھیلا سکتا. ہر روز نیا ڈرامہ تین سالوں سے ملک کا دیوالیہ نکال کر بھی جی نہیں بھرا. ہر گزرتے دن لاشیں گرتی ہیں چوروں کو شہید اور صدر. کوئی بھی قانونی عمل ان کی گردن تک پہنچے تو صوبائی تعصب کو ہوا. حکومتی سطح پر سندھ بھر میں ہرتال کروا کر اربوں روپے کا نقصان اور کی لوگوں کی جانیں بھی لے لیں
    ایسی جمہوریت پر لعنت بے شمار

    http://www.express.com.pk/images/NP_LHE/20110312/Sub_Images/1101189709-2.gif

  57. آج کے دن پاکستان میں حکومت نے عدالتوں کے خلاف ہرتال کی ایک دوسرے کو لوٹے لوٹے پکارا، صوبائی تعصب کی ہوا دی، عوام جن میں سے بہت سوں کو ان دو نمبر لوگوں کی اصلیت کا بھی پتا نہیں ان کے ذہنوں میں دوسرے علاقے کے لوگوں کے خلاف نفرت ڈالی. دو چار دن تک یہی لوٹے آپس میں بھائی بھائی ہو جاییں گے لیکن جو آج ہرتال میں مالی و جانی نقصان ہوا اس کا ذمےدار کون ہو گا؟ اس ملک کی یکجہتی کے خلاف جو کچ کتے کی طرح ان کتوں نے بھونکا اس کا زہر کیسے نکلے گا؟
    گیلانی سے لے کر زرداری اور فردوس عاشق سے لے کر خورشید شاہ کس کس کا رونا روئیں ہر کوئی دولت کے انبار اکٹھے کر رہا ہے. ہمارے فوجی بھی آے تو کسی نے اسلام کا غلط استعمال کیا اور کسی نے ڈھول باجے پر ڈانس کیا کاش کوئی ایسا بھی آتا جو کرپشن کرنے والوں کو الٹا لٹکاتا. کاش کوئی ایسا بھی ہو جو سولہ سال سے لے کر بیس سالوں تک دن رات محنت کر کے نوکریاں حاصل کرنے والے قابل لوگوں پر اپنے نکمے بچوں اور دوستوں کو لگانے والوں کا احتساب کر سکے. کاش کوئی اس ڈرامے کو ہمیشہ کے لئے ختم کر دے. کیونکہ ملک ایسے ہی چلتا رہا ہو تو آج جو چوری چکاری اور قتل کے سینکڑوں واقعات ہو رہے ہیں یہ انارکی اور خون ذنی کی طرف لے جاییں گے اور ہزاروں معصوم لوگ روزانہ اپنی جانوں سے جاییں گے. گزشتہ پانچ سالوں میں اشیاۓ خوردنی میں کئی سو فیصد اضافہ اور ملک کے قرضے دگنے ہو چکے ہیں. گزشتہ پانچ سالوں میں ملک کا کوئی بھی سیاستداں نیچے نہیں گیا جب یہ ے تھے تو لاکھوں والے تھے آج ہر کوئی اربوں روپے کا مالک ہے.

    http://www.express.com.pk/images/NP_LHE/20110312/Sub_Images/1101189712-1.jpg

  58. hypocrite says:

    Revolution sahib

    یا الله رحم ٹی وی پر جاپان میں آنے والا سونامی براہ راست دکھا رہے ہیں جہاں گاڑیاں اور انسان بہتے جا رہے ہیں

    I really admire your concern and caring nature about human beings regardless of their religion, nationality and location. It is indeed sad.

    A split second could change the whole life of a person and a nation. If I can learn something from these moments, I can become a good person. Alas I dont learn.

  59. hypocrite says:

    Revolution sahib,

    ہر طرف ہر طرف الو کے پٹھے بیٹھے ہیں . لاکھوں کروڑوں روپے اس ملک کے کھاتے ہیں اور حرکتیں ہمارے ملک کے گھٹیا سیاستدانوں والی.

    http://www.express.com.pk/images/NP_LHE/20110312/Sub_Images/1101189864-2.gif

    Agreed but why only target a small segment of society comprising of the politicians. I am not a politician but I am worst than the politicians and the Akmal brothers.

    Look what I do as a grocer, as a watchman, as a teacher, as a policeman, as a tax collector, as a doctor, as a chemist, as a government official, as an industrialist, as a landlord, an an agricultarlist, as a neighbour, as a husband, as a father, as a child and I can continue on and on. If you ask me about how honestly I perform my duties in any of these roles, you will be shocked. But I will not be ashamed at all. Instead I will say

    موج ہی موج فقیروں کی

    Sorry I cannot write the last part of the above, becuase of my respect for you.

  60. hypocrite says:

    گزشتہ پانچ سالوں میں اشیاۓ خوردنی میں کئی سو فیصد اضافہ

    I came across a chart in Time Magazine where they have shown that in Pakistan on average a family spends 46% of its earnings on food. Compare it with USA where the percentage goes to 7%. I think the number for india is between 30 ~ 35%.

    No doubt in USA an dother parts of Europe the people have money to enjoy life but in our country the ordinary people cannot think beyond putting food on the table. Some say 64 years in life of a nation is nothing. I can buy that as long as we are heading in the right direction.

  61. hypocrite says:

    Black sheep sahib,

    طالبان زندہ باد۔۔۔۔

    روس اور امریکا سے لڑنے والے مجسمے سے ڈر گئے

    کاش میں مجسمے نہیں سوچ کو توڑ سکتا

  62. Karachi !!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!

    کراچی: ٹارگٹ کلنگ کا سلسلہ نہ رک سکا، مزید 7افراد جاں بحق کراچی میں فائرنگ کے واقعات میں جماعت اہلسنت کےعہدیدار سمیت تین افراد ہلاک ہوگئے جبکہ چار نوجوانوں کی لاشیں ملی ہیں جنہیں گولیاں مارکرقتل کیا گیا۔

    گارڈن کے علاقے میں واقع شو مارکیٹ کے قریب الماری والی گلی سے دو نوجوانوں کی لاشیں ملیں جنہیں نامعلوم افراد نے تشدد کے بعد فائرنگ کر کے ہلاک کیا،جن میں سے ایک نوجوان کی شناخت عدنان کے نام سے ہوئی ۔سائٹ کے علاقے ہارون آباد میں پرائیوٹ سیکورٹی گارڈ 19 سالہ شمس الحق گولی چلنے سے ہلاک ہو گیا۔ اس سے پہلے کورنگی نمبر ایک کے علاقے میں صدیقیہ مسجد کے قریب نامعلوم موٹر سائیکل سواروں کی فائرنگ سے اہلسنت کورنگی کے امیر 45 سالہ سید محمود حسین شاہ جاں بحق ہو گئے۔ نیو کراچی تھانہ بلال کالونی کی حدود میں فائرنگ سے سنی تحریک بزرگ کمیٹی کے رکن ولی محمد قادری زخمی ہو گئے۔۔عزیز آباد بلاک تھری ایم بی لان کے قریب سے چھبیس سالہ نعمان کی گولیوں سے چھلنی لاش ملی۔ملیر میں میمن گوٹھ سے دو روز پُرانی لاش برآمد ہوئی جسم پر گولیوں کے نشانات ہیں۔سپر ہائی وئے پر فائرنگ سے ایک شخص ہلاک ہو گیا۔

    http://dunyanews.tv/index.php?key=Q2F0SUQ9MiNOaWQ9MjE5OTkjTGFuZz11cmR1

    کراچی آج پھر خون میں نہا رہا ہے . ہمارا مسلح افواج سمندر میں کی ملکوں کے ساتھ مشکیں کرتی ہیں اور طرح طرح کے ہتھیاروں کے تجربات کرتی ہیں. باہر والوں کے حملے نہیں روک سکتے تو کم از کم کراچی ہی کو بچا لو.

    افواج پاکستان اگر وہ وقعی اپنے آپ کو اس ملک کی فوج سمجھتے ہیں تو کراچی کے غنڈوں کے خلاف بھی آپریشن کریں . دنیا پر یقین رکھ کر ڈالر دینے والوں کے لئے تو اپنا ملک تباہ کر دیا اب آخرت پر یقین رکھتے ہوے کوئی کام اس ملک کے لئے بھی کردو اور ان غنڈوں اور قاتلوں کو ہمیشہ ہمیشہ کے لئے ختم کر دو ورنہ ہماری داستان نہ ہو گی داستانوں میں .

  63. روزانہ پاکستان میں جب دس بارہ بجتے ہیں تو کراچی میں ہلاکتوں اور فائرنگ کی خبریں آنا شروع ہو جاتی ہیں شام ہونے تک ہلاکتیں دس پندرہ تک پہنچ جاتی ہیں . ٹی وی پر کراچی جیسے شہر میں امن قایم کرنے کی بجاۓ لوٹا لوٹا چل رہی ہوتی ہے. جب کبھی پوچھا گیا کہ حالات کنٹرول میں نہیں جواب ملا پولیس کی کمی ہے. پولیس بھرتیاں کرنے کا وقت آتا ہے تو پی پی اور ایم کیو ایم آپس میں پولیس کی نوکریاں بانٹ لیتے ہیں ، نتیجہ یوں نکلتا ہے کہ ٹریننگ کرتے وقت جیالے پولیس والے اور حق پرست پولیس والے آپس میں لڑتے ہیں اور ٹریننگ سٹیشن میں چه سات اپنی جان سے جاتے ہیں. میڈیا حسب سابق لوٹا لوٹا اور مسکڑیاں کر رہا ہوتا ہے.
    میں نے کبھی بھی میڈیا کو کراچی جیسے شہر کے لئے میٹروپولٹن کی قسم کی پولیس بنانے اور میرٹ پر بھرتیاں کرنے کے بارے میں بات کرتے نہیں سنا. نصیر الله بابر کے دور میں پاکستان کی تاریخ کے کامیاب ترین آپریشنز میں سے ایک آپریشن ہوا. بعد میں ریاست ان افسروںحفاظت نہ کر سکی اور وہ بے چارے چن چن کر مار دے گئے. اپنے سابقہ پولیس افسران کا انجام دیکھ چند اچھے پولیس والے بارہ مئی کو اپنے گھروں میں بیٹھے رہے اور پارٹیوں سے وابستگی والے بوٹ اتار کر لاشیں گرتی دیکھتے رہے.
    رینجرز جو کہ ہمیشہ فوج کے زیر سایا ہوتی ہے وہ بھی گشت کرنے سے زیادہ کچھ نہیں کر رہی اور کراچی کے لوگ چاہے وہ کسی سیاسی جماعت سے ہیں یا نہیں کیڑے مکوڑوں کی طرح مر رہے ہیں.

  64. saleem raza says:

    باوا جی السلام و علیکم ،میں نے ویڈیو دیکھی ھے ،آور اندازہ لگایا ھے ، کہ جب پانی ایک جگہ جمح ھوتا رہے آور
    اُس کے لیے راستہ نہ بنایا جاے ، تو جب پانی خود راستہ بناتا ھے ، تو وہ تبائی پھیلاتا ھے ،
    میں بڑا پرُ امید ھوں ۔ اس لڑ کی نے جس جرات کا مظاہر کیا ھے ، میں اس کو سلام کرتا ھوں
    پاکستان کے نوجوان نسل کی عقل میں یہ بات آتی جارہی ھے ، کہ دنیا میں ان کا آور کوئی
    دشمن نہیں ماسواے ان چند لوگوں کے ،
    میری دعا ھے کہ اس لڑکی کی اواز چند لوگوں تک پہنچ جاے،

  65. hypocrite said:

    موج ہی موج فقیروں کی

    Sorry I cannot write the last part of the above, becuase of my respect for you.

    ————————————————————-

    اسلام و علیکم
    ہپوکرت بھائی . آپ نے جو بھی لکھنا ہو بے خوف لکھ دیا کریں. سیاستدانوں کو میں زیادہ قصور وار اس لئے ٹھہراتا ہوں کیونکہ ان کی ذمہ داری ہے کہ ملک میں ہونے والی کرپشن، بد عنوانی ، رشواتستانی وغیرہ کو روکیں گے. ڈاکٹر انجینئیر ، قصائی، سبزی والا، دودھ والا نیز معاشرے میں دوسرے کرپٹ عناصر کی سرکوبی کے لئے اقدامات کرنے کے لئے ہی سیاستداں آتے ہیں اور ملک میں موجود محکموں کے سربراہ بنتے ہیں سربراہ بننے کے بعد یہ بھی اسی میں شامل ہو جاتے ہیں اور اپنے عزیز و اقارب کو تمام ا علیٰ عھمدوں تک لے آتے ہیں. جب ان کے سر پر چھوٹ پڑنے لگتی ہے تو صوبائی یا علاقائی تعصب پھیلاتے ہیں دام ملنے کے بعد پھر ٹھیک ہو جاتے ہیں لیکن تعصب کی لگائی ہوئی آگ دن بدن بڑھتی ہی جاتی ہے. یہی پاکستانی جب دنیا کے دوسرے ملکوں میں جا کر تعلیم حاصل کرتے ہے یا کام کرتے ہیں تو اپنا لوہا بھی منواتے ہیں اور وہاں کے قانون کا احترام بھی کرتے ہیں کیونکہ اگر قانون کی پاسداری نہ کریں گے تو قانون اپنا راستہ خود بناتا ہے .. .

  66. کراچی،فائرنگ کے واقعات میں کل سے ابتک18افراد قتل

    Share Updated at 1030 PST

    کراچی…صدر مملکت کی کراچی میں موجودگی کے دوران شہر کے مختلف علاقوں میں جاری دہشت گردی کے واقعات میں سیاسی مذہبیجماعتوں کے کارکنوں سمیت 18 افراد کو قتل کردیا گیا جبکہ 18 افراد زخمی بھی ہو گئے ہیں،جس کے بعد شہر کے کچھ علاقوں میں معمولات زندگی تاحال متاثر ہیں۔ لیاقت آباد کے علاقے میں جھنڈا چوک پر فائرنگ سے ایک شخص جاں بحق ہوا،جبکہ ابوالحسن اصفہانی روڈ پر واقع موٹر مکینک کے ورکشاپ پرگاڑی میں سوار ملزمان نے فائرنگ کردی،جس کے نتیجے میں ورکشاپ میں کام کرنے والے دو افراد جاں بحق ہوگئے،عیدگاہ کے علاقے میں پرانا حاجی کیمپ کے قریب بھی نامعلوم ملزمان کی فائرنگ سے ایک شخص ہلاک ہوا ۔ گذشتہ روز بھی کراچی کے مصروف علاقے کھاردار میں ا یک سیاسی جماعت کے کارکن خرم کو نامعلوم ملزمان نے فائرنگ کرکے ہلاک کردیا تھا،واقعے کے بعد علاقے میں شدید فائرنگ ہوئی جس سے کشیدگی پھیل گئی اور مشتعل افراد نے ایک مقامی تنظیم کے دفتر، ایک بس، ٹرک اور رکشے کو آگ لگا دی۔ گلستان جوہر کے علاقے میں ایک سیاسی جماعت کے کارکن، 12 سالہ بچہ،اور دو نوجوانواں سمیت چا رافراد کوفائرنگ کرکے قتل کردیا ،گارڈن، ملیرمیمن گوٹھ اور سپر ہائی وے سے بھی چار افراد کی لاشیں برآمد ہوئیں،مقتولین کو گولیاں مار کر قتل کیا گیا،،جبکہ عزیز آباد میں موٹر سائیکل سوار ملزمان کی فائرنگ سے ایک ہلاک ہوا،ا سکے علاوہ سعید آباد،،کیماڑی،قائد آباد،انچولی سوسائٹی ، کھارادر ابوالحسن اصفہانی روڈاور لیاری میں فائرنگ سے 18افراد زخمی بھی ہوئے۔گذشتہ دو روز سے جاری پرتشدد واقعات کے بعد شہر کے کچھ علاقوں میں صورتحال اب بھی کشیدہ ہے،اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکار تعیناتی کے باوجود ٹارگٹ کلرز کو گرفتار کرنے میں ناکام دکھائی دیتے ہیں۔
    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/13-03-2011/u65228.htm

  67. hmabuksh says:

    I am sorry but someone has to mention the fact that the ARY programme HAR LAMHA PURJOSH on the 11/03/11 about the match between Bangladesh and England,the producer brought someone disguised as Bengali wearing lungi and topi and jumping like a monkey and talking about eating fish and rice.If this programme was made in a civilised world , it would have been banned and sued for raceism. I live in England and been to Bangladesh many time for business .I found the people very fond of Pakistan. Believe me they are progressing rapidly but we still think that they are smelly,stinky and fish eating low cost people. That was same reason we lost that beatiful land and people.I am so ashamed to see that we make the fun of bengalis still after 40 years. My mother still call it East Pakistan. I want all the members of forum to criticise the ARY and make them stopped that abuse.

  68. saleem raza says:

    آج تو لگتا ھے اخبار والے جوانوں کی چھٹی ھے ، یا ؛ پھر آبھی بندے مارنے کا ٹارگٹ پورا نہیں ھوا

  69. کراچی:فائرنگ کے واقعات ، دو سیاسی کارکنوں سمیت6 افرادہلاک

    Share Updated at 0600 PST

    گذشتہ روز سے پرتشدد واقعات میں ہلاکتوں کی تعداد15 ہوگئی

    کراچی … کراچی کے علاقے گلستان جو ہر،نارتھ ناظم آباد سخی حسن چورنگی،کٹی پہاڑی اور لی مارکیٹ کے قریب فائرنگ کے واقعات میں دو سیاسی کارکنوں سمیت 6 افراد جاں بحق ہوگئے ہیں،گذشتہ روز سے شہر میں پرتشدد واقعات کے دوران ہلاکتوں کی تعداد 15 ہوگئی ہے۔پولیس کے مطابق گلستان جوہر میں کامران چورنگی کے قریب فائرنگ سے سیاسی جماعت کا کارکن ہلاک ہوا،مقتول کی شناخت30 سالہ عمیر کے نام سے ہوئی ،پولیس کے مطابق گلستان جوہر کے علاقے میں ہی منور چورنگی کے قریب زیر تعمیر عمارت سے سیاسی جماعت کے لاپتہ ہونے والے کارکن ھمایوں کی لاش برآمد ہوئی،جسے گولیاں مار کر قتل کیا گیا ہے،پولیس کے مطابق نارتھ ناظم آباد ٹاؤن کے علاقے میں کٹی پہاڑی اور سخی حسن چورنگی کے قریب فائرنگ سے دوافراد ہلاک ہوئے،مقتولین کو گولیاں مار کر نشانہ بنایا گیا ،ہلاک ہونے والے ایک نوجوان مقتول کے ہاتھ بھی رسیوں سے بندھے ہوئے تھے،لی مارکیٹ کے قریب واقع کھجور بازارمیں بھی نامعلوم ملزمان کی فائرنگ سے ایک شخص ہلاک ہوا،گذشتہ روز بھی شہر میں جاری پرتشدد واقعات کے دوران 9 افراد جاں بحق ہوئے تھے۔
    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/14-03-2011/u65292.htm

  70. ریمنڈ ڈیوس کے استثنیٰ کا فیصلہ ٹرائل کورٹ کریگی، لاہور ہائی کورٹ

    Share Updated at 1010 PST

    لاہور…لاہور ہائی کورٹ نے قرار دیا ہے کہ دو پاکستانی شہریوں کے قتل کے الزام میں گرفتار امریکی شہری ریمنڈ ڈیوس کے استثنیٰ کا فیصلہ ٹرائل کورٹ کرے گی، اور استثنیٰ کے حوالے سے دائر درخواستیں خارج کریں۔ اس سے قبل استثنیٰ کے متعلق کیس کی سماعت کے دوران وزارت خارجہ نے اپنا جواب عدالت میں داخل کر دیا۔وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ ریمنڈ کے سفارتی استشنا کا ریکارڈ موجود نہیں، ریمنڈ کے حوالے سے جو بھی ریکارڈ موجود ہوا عدالت میں پیش کر دیں گے، ڈپٹی اٹارنی جنرل کا کہنا ہے کہ وزارت خارجہ قانون کی حکمرانی اور اپنی ذمہ داری سے مکمل آگاہ ہے۔ وزارت خارجہ کے جواب میں موقف اختیار کیا ہے کہ امریکی سفارت خانے نے 27 جنوری کو آگاہ کیا کہ ریمنڈ ڈیوس کو رہا کیا جائے، ڈپٹی اٹارنی جنرل نے عدالت میں بیان دیا ہے کہ ریمنڈ ڈیوس کو امریکی حکومت کی درخواست پر آفیشل بزنس ویزہ دیا گیاہے۔
    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/14-03-2011/u65302.htm

  71. کراچی: بدامنی کا پانچواں دن، 46افراد لقمہ اجل بن چکے،کشیدگی برقرار

    Updated at 1220 PST

    کراچی …افضل ندیم ڈوگر…صدر پاکستان اور وزیراعظم کی کراچی کی موجودگی کے دوران شروع ہونیوالی بدامنی کی لہر کے آج پانچویں روز بھی مختلف علاقوں میں پرتشدد کارروائیوں کا سلسلہ جاری ہے۔ اس دہشت گردی میں اب تک چھیالیس افراد دہشت گردی کا نشانہ بن چکے ہیں۔کراچی میں جب بھی حکومت اور اتحادیوں میں تلخیاں پیدا ہوتی رہیں اور ملک کا کوئی بڑا کراچی میں ہوتا تھا اس دوران شہر بدامنی کی لپیٹ میں آتا رہا۔ سیاسی تلخیوں کی ہر لہر درجنوں شہریوں کا خون لے کر تھمتی رہی ہے۔ شہر میں مسلسل بدامنی کا آج پانچواں دن ہے اور اموات چھیالیس ۔ جمعرات6 افراد ہلاک کردیا گیا جبکہ پانچ گاڑیاں جلا دی گئیں۔ ہڑتال کے روز مزید10افراد لقمہ اجل بنے اور مزید سات گاڑیاں جلادی گئیں۔ ہفتہ12 مارچ کو بھی شہر شدید بد امنی کی لپیٹ میں رہااور مزید13 افراد فائرنگ سے جاں بحق ہوگئے جبکہ6 مزید گاڑیوں اور املاک نذر آتش کردیاگیا جبکہ کھارادر میں امن کمیٹی کا دفترجلا دیا گیا۔ اتوار کے روز مزید10 شہری قیمتی جانوں سے ہاتھ دھوبیٹھے جبکہ دیڑھ درجن زخمی ہوئے۔تازہ واقعات میں گلستان جوہر میں اے این پی کے زخمی کارکن ہمایوں کو مسلح ملزمان نے مبینہ طور پر پولیس کی حفاظتی تحویل سے اغوا کرکے قتل کردیا جس کیخلاف علاقے میں کاروبار بند ہے اور مشتعل افراد نے آج صبح گاری نذر آتش کردی۔ اس واقعہ کیخلاف اے این پی کے حمایت یافتہ علاقوں میں سخت کشیدگی ہے۔ نارتھ ناظم آباد بلاک ڈی میں کٹی پہاڑی، سخی حسن میں مرکزی شارع، نیوکراچی یارو گوٹھ اور لی مارکیٹ کھجور بازار سے چار افراد کی گولیوں لگی لاشیں ملیں جن پر تشدد کے نشانات بھی پائے گئے جبکہ مختلف علاقوں میں تین افراد فائرنگ سے زخمی ہوئے۔

    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/14-03-2011/u65311.htm

  72. aftab says:

    Army should remain restricted to defence issues: Saad Rafique

    Pakistan Muslim League – Nawaz (PML-N) leader and MNA Khwaja Saad Rafique on Monday criticised a recent statement attributed to military spokesman Major General Athar Abbas regarding the country’s defence budget, DawnNews reported.

    Rafique said the military’s procedures and the use of its budget were not beyond criticism.

    He said “certain points in the military spokesman’s statement are not acceptable to democrats” and that it was the parliament’s prerogative to oversee the budgets of state institutions.

    Rafique said a strong and professional military would always be necessary for the country, however, its procedures and its budget details cannot be beyond criticism.

    He further said that the military should remain restricted to the country’s “defence and national security issues”.

    Earlier, speaking to a private television channel, Director General of Inter Services Public Relations (ISPR) Athar Abbas had reportedly said that the usage of funds in civilian departments should be streamlined instead of criticising the defence budget.

    No army in the world can disclose its development budget to the public, a report quoted Abbas as saying.

    http://www.dawn.com/2011/03/14/army-should-remain-restricted-to-country%E2%80%99s-defence-issues-saad-rafique.html

  73. I am not sure if pkpolitics still have the same “management” or it is “new” production under the “new” management. However since I have a very long association with pkpolitics , I thought it won’t be a bad idea just put some thoughts here.
    pkpolitics and indeed many other blogs or “internet journalism” as they call it , was the phenomenon that like many other things was first successfully used by the pro democratic forces of Pakistan than what we are seeing now in middle east and many other oppressed societies in the world. People of Pakistan used the modern means of communication to enhance the awareness and campaign against the worst military dictator of the twenty first century.
    I believe the old management of pkpolitics may had taken more interest in what is happening in middle east (Egypt was probably the wrong choice , in fact Behrain and Saudi Arab were the better choices to discuss here.)
    I spent few years in Saudi and I know that what it means when even the western media reports “few hundred” people agitated in “Qatif and Hufoof”….
    is anybody there??

  74. This is such a rare and encouraging video to watch. I hope the people of Saudi Arabia will also rise one day.
    This protest happened in Qatif , and there was a Yoom-ul-Ghadhab last Friday. And surely the western media dependent on the oil coming from Saudi was not responsive to things happening in Saudi. But I am sure with the information flow in twenty first century no power can stop them any more. If it were 80’s “Pakistan” armed forces had crushed all these people with brutal force and nobody had ever known.

    http://www.youtube.com/watch?v=soEOxKxeux4

  75. Bawa says:

    Saudi troops sent into Bahrain

    Military force deployed to Gulf neighbour to help protect government facilities after weeks of unrest.

    Hundreds of Saudi troops have entered Bahrain to help protect government facilities there amid escalating protests against the government.

    Bahrain television on Monday broadcast images of troops in armoured cars entering the Gulf state via the 26km causeway that connects the kingdom to Saudi Arabia.

    The arrival of the troops follows a request to members of the Gulf Co-Operation Council (GCC) from Bahrain, whose Sunni rulers have faced weeks of protests and growing pressure from a majority Shia population to institute political reforms.

    The United Arab Emirates has also sent about 500 police to Bahrain, according to Abdullah bin Zayed al-Nahyan, the Emirati foreign minister.

    The United States, which counts both Bahrain and Saudi Arabia among its allies, has called for restraint, but has refrained from saying whether it supports the move to deploy troops.
    “We urge our GCC (Gulf Cooperation Council) partners to show restraint and respect the rights of the people of Bahrain, and to act in a way that supports dialogue instead of undermining it,” Tommy Vietor, the White House spokesman, said.

    ‘Solidarity move’

    Abdel al-Mowada, the deputy chairman of Bahrain’s parliament, told Al Jazeera that it was not clear how the Saudi force would be deployed but denied the troops would become a provocation to protesters.

    “It is not a lack of security forces in Bahrain, it is a showing of solidarity among the GCC,” he told Al Jazeera.

    “I don’t know if they are going to be in the streets or save certain areas … [but protesters] blocking the roads are no good for anyone, we should talk.

    “The government is willing to get together and make the changes needed, but when the situation is like this, you cannot talk.”

    The troops arrived less than 24 hours after Bahraini police clashed with demonstrators in one of the most violent confrontations since troops killed seven protesters last month.

    But opposition groups, including Wefaq, the country’s largest Shia movement, have spoken out against the use of foreign troops.

    “We consider the entry of any soldier or military machinery into the Kingdom of Bahrain’s air, sea or land territories a blatant occupation,” Wefaq said in a statement.

    ‘Blatant occupation’

    Nabeel Rajab, from the Bahrain Centre for Human Rights, told Al Jazeera that the Saudi troops would be opposed by the protesters.

    “This is an internal issue and we will consider it as an occupation,” he said. “This step is not welcomed by Bahrainis. This move is not acceptable at all. It is a repressive regime supported by another repressive regime.”

    Already, as reports circulated about the Saudi force’s arrival, hundreds of protesters had gathered behind makeshift checkpoints around the Pearl Roundabout, the scene of much of the protest in Bahrain.

    Even some government supporters fear the economic impact of a Saudi intervention.
    “Who would want to do business here if there are Saudi tanks rolling across the causeway?” asked Abdullah Salaheddin, a Bahraini banker, last week.

    In a sign that the opposition and Bahrain’s royal family could still find a solution, the opposition groups said they had met Salman bin Hamad al-Khalifa, Bahrain’s crown prince, to discuss the mechanism for national dialogue.

    The crown prince offered assurances on Sunday that dialogue would address key opposition demands including giving parliament more power and reforming government and electoral districts.

    http://english.aljazeera.net/news/middleeast/2011/03/2011314124928850647.html

  76. normalkhan says:

    جس پاکستانی سے بات کرو کہتا ہے کہ یہ زلزلہ اور سونامی امریکا کی ٹیکنالوگی سے آیا ہے اس کے پیچھے امریکا ہے .پھر میں ان سے دو سوال پوچھتا ہوں کے کیا دوسرے ممالک سے سائنسدان جاہل ہیں جہاں یہ پتا نہ چل سکے اور دوسری بات یہ کے سترویں اور اٹھاری صدی میں بھی سونامی اور زلزلے یہ تھے کیا وہ بھی امریکا ہی کی وجہ سے یہ تھے .زلزلوں کی تاریخ لاکھوں سال پرانی ہے .اب ہماری قوم کو کون سمجھاہے .

    پہلے کے مولوی اور تھے جو کہتے تھے کہ جو ہو رہا ہے الله کر رہا ہے پر اب کے موڈرن ملا کہتے ہیں جو کر رہا ہے امریکا کر رہا ہے ،لگتا ہے یہ لوگ شرک خفی میں مبتلا ہے

    ہر دوسرا پاکستانی یہ بھی کہتا ہے کہ جو مشرق وسطیٰ میں ہو رہا ہی وہ بھی امریکا کروا رہا ہے ،ایک طرف کہتے ہیں کے حسن مبارک امریکی اجنٹ تھا دوسری طرف کہتے ہیں کہ مصر میں جو ہوا وہ امریکا نے کروایا ،واہ کیا بات ہے
    لیبیا کے عوام کے ساتھ ہیں پر یہ بھی کہتے ہیں کے اس کے پیچھے امریکا ہے

    ایک طرف طالبان پرست مولوی کہتے ہیں کہ شیعہ کافر ہے اور جب امریکا یا اسرئیل حملے کی بات ہو تو کہتے ہیں امریکا مسلمان ملک ایران پر حملہ کر رہا ہے

    ایک دفہ کا ذکر ہے کہ ایک دھاتی کو پیٹ میں درد اٹھا وہ ایک ڈاکٹر کے پاس گیا ڈاکٹر کا تعلق جماعت اسلامی یا اسی طرح کی سیاسی مذہبی تنظیم سے تھا .
    دھاتی : ڈاکٹر صاحب میرے پیٹ میں بہت شدید درد ہے
    جماعتی ڈاکٹر : یہ سب امریکی سازش ہے وہ ہمیں ایسی غذا کھلا رہا ہے جس سے ہر مسلمان کے پیٹ میں درد ہو جائے
    دیہاتی : ڈاکٹر صاحب میری عمر ستر سال کی ہے اور مجھے اب صحیح نظر نہیں آتا
    جماعتی ڈاکٹر : یہ بھی یہود و نصارا کی سازش ہے تاکہ امت کو اندھا کر کے اپنے مقاصد پورے کرے
    دیہاتی : ڈاکٹر صاحب اس کا آخر علاج کیا ہے
    جماعتی ڈاکٹر : بس امریکا کو دو گالی صبح اور دو گالی شام میں .نہر منہ امریکہ کی مذمت اور سونے سے پہلے بھی -ہر مثبت سوچ سے پرہیز کریں اور روحانی علاج میں دن میں سو سو دفہ امریکا ،یہودی اور بھارت کا ذکر کریں .افاقہ ہوگا

  77. Standard of Speech by Sindh Interior Minister

    پاکستان کے بے غیرت سیاستدان آج پنجاب اسمبلی میں منی بدنام اور لوٹا کے گانے گا رہے ہیں اور دوسری طرف سندھ اسمبلی میں صوبے کا وزیر داخلہ کیا بکواس کر رہا ہے میرے خیال میں تو اڈمن صاحب کو سمینہ خاور کی بجاۓ زو الفقار مرزا کی یہ والی تقریر لگانی چاہئے تاکہ اس کے منہ پر ہر بندہ تھو تھو کر کے جائے

    http://tribune.com.pk/multimedia/videos/133048/

  78. کراچی:فائرنگ کے مختلف واقعات میں3افراد ہلاک
    Updated at 0825 PST
    کراچی…گزشتہ رات سے کراچی میں فائرنگ کے واقعات میں 3 افراد ہلاک ہوگئے ۔ پولیس کے مطابق ماری پور کے علاقے ٹرک اڈہ کے قریب نامعلوام افراد کی فائرنگ سے چوبیس سالہ رفیق نامی شخص ہلاک ہوگیا۔آج صبح اولڈ سٹی ایریا میں نشتر روڈ سے دو افراد کی لاشیں برآمد ہوئی جنہیں گولیاں مار کر قتل کیا تھا ۔ ایک مقتول کے ہاتھ بھی رسیوں سے بندے ہوئے ہیں ۔ پولیس نے واقعے کو ٹارگٹ کلنگ اور اغواکے بعد قتل کا واقعہ قرار دیا ہے ۔لاشوں کو پولیس کاروائی کے لئے سول اسپتال پہنچا دیاگیا۔

    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/16-03-2011/u65501.htm

  79. Interesting data from Hamid Saeed Kazmi bank accounts.

    Income : Rs. 80,000 as minister + 15,000 from school

    Bank Transactions:
    21/03/2009 : 9008 GBP
    21/08/2009 : 7000 GBP
    18/04/2009 : 1,000,000 rupees = 7,272 GBP
    06/11/2009 : 600,000 rupees = 4363GBP
    05/01/2010 : 380,000 rupees = 2764GBP
    05/08/2010 : 500,000 rupees = 3636GBP
    16/09/2010 : 1,100,000 rupees = 8000GBP

    Total Amount : 42043GBP

    With 344 kanals of land.

    اسکو کہتے ہیں کوئلوں کی دلالی میں منہ کالا ہونا

    ———-

  80. saleem raza says:

    http://www.jang.com.pk/jang/mar2011-daily/16-03-2011/updates/3-16-2011_65541_1.gif

    ——————————————————————————————————————-
    ھم آور ھماری غیرت آور ھمارا خون ،بھی ھمارا نہیں رہا ۔ آٍفسوس آفسوس جتنا بھی کیا جاہے کم ، لعنت ھے
    خادم اعلی تم پر ، لعنت ھے تم پر خادم اعلی ، تم خادم اعلی نہیں ھو تم بے غیرت اعلی ھو

  81. $$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$$

    شمالی وزیرستان، ڈرون حملے میں ہلاکتوں کی تعداد25ہوگئی
    Updated at 1455 PST
    میرانشاہ…شمالی وزیرستان میں امریکی جاسوس طیارے کے حملے میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 25 ہوگئی ۔ذرائع کے مطابق شمالی وزیرستان کی تحصیل دتہ خیل میں جاسوس طیارے نے ایک مکان کو نشانہ بنایا۔ حملے میں کئی میزائل فائر کیے گئے جس کے نتیجے میں 25 افراد ہلاک اور کئی زخمی ہوگئے۔ میزائل حملے کے بعد بھی علاقے میں کافی دیر تک جاسوس طیاروں کی پروازیں جاری رہیں

    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/17-03-2011/u65651.htm

  82. normalkhan says:

    یورپ ایک بار پھر مسلمانوں کی مدد کے لیہ پہنچ گیا ،قذافی کے ظلم سے لیبیا کے مسلمانوں کو بچانے کے لیہ قذافی کی فوج پر اقوام متحدہ کی طرف سے حملوں کی اجازت ،قذافی نے در کر اپنی پیشرفت روک دی
    پاکستان کے سارے چیمپین مولوی قذافی کی مذمت نہیں کر رہے تھے جو وہاں کے مسلمانوں کو مار رہا تھا کیوں کہ قذافی امریکا مخالف تھا
    ہمارے مولویوں کا دین صرف امریکا مخالف بن کر رہ گیا ہے

  83. کراچی:رات سے اب تک فائرنگ کے واقعات میں 14افرادہلاک
    Updated at 1950 PST
    کراچی…کراچی میں رات سے اب تک فائرنگ کے واقعات میں پولیس اہلکار سمیت10 افراد ہلاک ہوگئے ، کئی علاقوں میں صورتحال کشیدہ ہے ۔پولیس کے مطابق گلشن اقبال میں ڈسکو بیکری کے قریب ہوٹل پر نامعلوم افراد کی فائرنگ سے چھ افراد زخمی ہوگئے ۔ زخمیوں کو علاقے کے نجی اسپتال میں منتقل کیا گیا جہاں علاج کے دوران دو افراد نے دم توڑ دیا ۔ واقعے کے بعد علاقے میں کاروبار بند ہوگیا اور صورتحال کشیدہ ہے ۔کھارا در میں بھی نامعلوم ملزموں کی فائرنگ سے دو افراد ہلاک ہوگئے ، مرنے والوں کی شناخت نہیں ہوسکی ۔گلستان جوہر میں محکمہ موسمیات کے قریب فائرنگ کرکے ایک شخص کو قتل کردیا ۔ پولیس کے مطابق گلزار ہجری میں نامعلوم افراد کی فائرنگ سے پولیس اہلکار ارشد جاں بحق ہوگیا ۔ بغدادی کے علاقے میں فائرنگ کرکے25 سالہ کامران کو قتل کردیا گیاجبکہ پرانا گولیمار کے قریب فائرنگ سے45 سالہ علی نواز اور لیاری کے علاقے کلری میں پیپلز اسٹیڈیم کے قریب30 سالہ شخص ہلاک ہوگیا ۔ لیاری کے ہی علاقے چاکیواڑہ میں بھی فائرنگ سے سیاسی جماعت سے وابستہ28 سالہ خوشنود مارا گیا ۔ سولجر بازار کے علاقے میں ایک سیاسی جماعت کے دفتر پر بھی آتش گیر مادے سے حملہ کیا گیا تاہم دفتر بند ہونے کے سبب کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔ لسبیلہ کے قریب نامعلوم شرپسندوں نے ایک منی بس کو آگ لگا دی جو جل کر خاک ہوگئی ۔ کراچی میں گزشتہ روز بھی فائرنگ اور پرتشدد واقعات میں12 افراد ہلاک ہوگئے تھے

    http://jang.com.pk/jang/mar2011-daily/20-03-2011/u65998.htm

  84. Bawa says:

    فلوریڈا….ملعون پادری ”ٹیری جونز“ کی نگرانی میں قرآن پاک (نعوذ باللہ) نذر آتش

    فلوریڈا + واشنگٹن (نمائندہ خصوصی + اے ایف پی + آن لائن) امریکی ریاست فلوریڈا کے شہر گینز ولی میں دنیا کی سب سے بڑی دہشت گردی کا واقعہ ہوا جہاں ملعون پادری وین سیپ نے دوسرے معلون پادری ٹیری جونز کی نگرانی میں چرچ کے اندر قرآن پاک کے نسخے کو (نعوذ باللہ) نذر آتش کر دیا ہے۔ ستمبر میں قرآن پاک کو (نعوذباللہ) جلانے کا اعلان کرنے والے متنازعہ عیسائی پادری ٹیری جونز نے ناپاک جسارت کے اپنے منصوبے پر عملدرآمد کر دیا ہے۔ اے ایف پی کے مطابق فلوریڈا کے ایک چھوٹے چرچ میں عیسائیوں کی جیوری نے دس منٹ تک قرآن پاک کے سزا و جزا کے حوالے سے بحث کی جس کے بعد اس ملعون جیوری نے خباثت کا اظہار کرتے ہوئے (نعوذباللہ) قرآن پاک پر مقدمہ چلایا اور اپنے تئیں ”فرد جرم“ عائد کرتے ہوئے (نعوذباللہ) ”پھانسی“ کی سزا سنائی۔ اس موقع پر کلام اللہ کو ایک گھنٹے تک مٹی کے تیل میں ڈبوئے رکھا گیا پھر نکال کر پیتل کے ٹرے میں چرچ کے عین درمیان رکھا گیا ، چرچ کے پادری نے ملعون ٹیری جونز اور چند دیگر ملعونوں کی موجودگی میں قرآن پاک کے نسخے کو آگ لگا دی، اس موقع پر چند لوگوں نے جلتے قرآن مجید کے نسخے کے ساتھ فوٹو بنوائے۔ ملعون ٹیری جونز کا کہنا ہے کہ میں نے ستمبر میں مسلمانوں کو خبر دار کیا تھا کہ وہ اپنی کتاب کی حفاظت کر لیں اور اس کا دفاع کریں لیکن مجھے کوئی جواب موصول نہ ہوا تو میں نے سوچا کہ حقیقی سزا دیئے بغیر حقیقی ٹرائل نہیں ہو سکتا اس لئے میں نے قرآن پاک کو نعوذباللہ سزا دے دی ہے۔ واضح رہے کہ ان ملعونوں کی تقریب میں عام عوام کو بھی دعوت دی گئی تاہم 30 لوگوں نے شرکت کی۔ واضح رہے کہ ان پادریوں کو اصل خطرہ تیزی سے پھیلتے ہوئے اسلام سے محسوس ہو رہا ہے‘ ٹیری جونز کی حماےت میں آنے والے جڈویگا شائز نے تشویش ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ یورپ میں تیزی سے اسلام پھیل رہا ہے۔ ملعون ٹیری جونز نے 9/11 کی برسی کے موقع پر اپنے اس ناپاک منصوبے کا اعلان کیا تھا مگر امت مسلمہ کے مسلسل احتجاجی مظاہروں کے باعث یہ قبیح فعل روک دیا اور اب اس ناپاک منصوبے پر عملدرآمد کر دیا ہے۔

    http://www.nawaiwaqt.com.pk/E-Paper/Lahore/2011-03-22/page-1/detail-18

  85. Bawa says:

    Koran burnt in Florida church

    Mon Mar 21, 12:59 am ET

    GAINESVILLE, Florida (AFP) – A controversial US evangelical preacher oversaw the burning of a copy of the Koran in a small Florida church after finding the Muslim holy book “guilty” of crimes.

    The burning was carried out by pastor Wayne Sapp under the supervision of Terry Jones, who last September drew sweeping condemnation over his plan to ignite a pile of Korans on the anniversary of September 11, 2001 attacks.

    Sunday’s event was presented as a trial of the book in which the Koran was found “guilty” and “executed.”

    The jury deliberated for about eight minutes. The book, which had been soaking for an hour in kerosene, was put in a metal tray in the center of the church, and Sapp started the fire with a barbecue lighter.

    The book burned for around 10 minutes while some onlookers posed for photos.

    Jones had drawn trenchant condemnation from many people, including US President Barack Obama, Secretary of State Hillary Clinton and Secretary of Defense Robert Gates, over his plan to burn the Muslim holy book in September.

    He did not carry out his plan then and vowed he never would, saying he had made his point.

    But this time, he said he had been “trying to give the Muslim world an opportunity to defend their book,” but did not receive any answer.

    He said he felt that he couldn’t have a real trial without a real punishment.

    The event was open to the public, but fewer than 30 people attended.

    Life in the normally quiet city of Gainesville is centered around the University of Florida. And while there were public protests against Jones’ 9/11 activities, this event was largely ignored.

    Jadwiga Schatz, who came to show support for Jones, expressed concern that Islam was growing in Europe.

    “These people, for me, are like monsters,” she said. “I hate these people.”

    Jones said he considered this event a success.

    “This is a once-in-a-lifetime experience,” he said.

    http://news.yahoo.com/s/afp/20110321/ts_alt_afp/usattackreligionislamkoran

  86. ukpaki1 says:

    ASTAGHFIRULLAH! ASTAGHFIRULLAH!

    i firmly believe that the damned/mardood who has done this act will soon die like a dog and whole world will see this. no body will be able to save him. he may be killed by someone like a pig or he’ll directly face the wrath of ALLAH.

    many such things r happening in iraq and afghanistan by nato soldiers also.
    soon they all will see INSHALLAH.

    May ALLAH bless Pakistan and Pakistanis.

  87. saleem raza says:

    یہ پادری کتے کا پتر باز نہیں آیا ، مسلمانوں کے جزبات مجرو کرنے سے ، اس سے بڑی غنڈہ گردی آور دشت گردی
    کیا ھو سکتی ھے ؛ اب دیکھتے ھیں دنیا میں عرب مماملک کے امریکی دلال کیا کرتے ھیں ،
    لیکن یہ پادری تو کتے سے بھی بد ترین موت مر ےگا ،

    جتنا بھی آفسوس کیا جاے سکے کم ھے ،

  88. Bawa says:

    ہماری قومی و مذہبی بے غیرتی کی انتہا

    کل میں نے فلوریڈا میں پادریوں کے ہاتھوں قران پاک جلائے جانے کی خبر تین تھریڈ پر اردو اور انگریزی میں پوسٹ کی تھی تاکہ ہمارے جن لوگوں کے لیے ہماری اردو زبان اجنبی ہو چکی ہے انکو بھی خبر ہو سکے. اس خبر کو پوسٹ کرنے کے کوئی تین گھنٹے بعد تک میں اس فورم پر موجود رہا اور لوگوں کا ردعمل دیکھنے کی کوشش کرتا رہا. لوگ آتے رہے اور اپنے سیاسی کومنٹس پوسٹ کرتے رہے لیکن کسی نے اس خبر کو اہمیت نہ دی. اسکے بعد میں اٹھکر سونے چلا گیا. نیند کہاں آنی تھی؟ بس لیٹا لیٹا یہی سوچتا رہا کہ ہم جن مغربی لوگوں کو مہذب اور اعلی ا تعلیم یافتہ سمجھتے ہیں انکی ذہنی پستگی کا کیا عالم ہے؟ ہم طالبان سے نفرت کرتے ہیں اور انہیں رواداری کا قاتل سمجھتے ہیں لیکن یہ طالبان تو ہر معاشرے میں موجود ہیں حتی کہ امریکہ جیسے ترقی یافتہ ملک میں بھی ان طالبان ذہنیت کے لوگوں کی کمی نہیں ہے. یہ سوچ مجھے تنگ کرتی رہی کہ جو لوگ ایک کتاب کو برداشت نہیں کر سکتے وہ مسلمانوں کو برداشت کیسے کر لیں گے؟ یہی سوچتے سوچتے پتہ نہیں کب نیند آگئی؟

    صبح اٹھکر اس آس پر کیمپوٹر آن کیا کہ اب تک یہ خبر مین تھریڈ کے طور پر پوسٹ ہو چکی ہوگی اور میرے دوستوں نے اسکی مذمت میں کومنٹس کے انبار لگا دیے ہونگے. یہ دیکھکر حیرانگی کی انتہا ہوگئی کہ مین تھریڈ کے طور خبر تو واقعی بدل چکی تھی لیکن نئی خبر قران پاک جلانے کی نہیں بلکہ عمران خان کے نام ایک نامعلوم خط کی تھی. اس خبر کو چھوڑ کر میں نے جلدی جلدی دوسرے تھریڈ تلاش کیے جہاں میں نے یہ خبر پوسٹ کی تھی کہ شاید وہاں اس خبر کو ڈسکس کیا جا رہا ہوگا لیکن یہ جان کر انتہائی مایوسی ہوئی کہ صرف ایک تھریڈ پر دو لوگوں نے اس خبر کی مذمت کرنا مناسب سمجھا

    ریمنڈ ڈیوس کیس نے ہماری قومی بے غیرتی کو اجاگر کیا تھا لیکن اس خبر پر ہمارے رد عمل نے ہماری مذہبی بے غیرتی کو بھی نمایاں کر دیا ہے. ہمارے لیے زرداری، نواز شریف، عمران خان اور الطاف حسین ہی اہم ہیں اور قومی اور مذہبی غیرت کی ہماری زندگی میں کوئی اہمیت نہیں. یہ بے ہسی ہمیں کہاں لے جائے گی؟ کیا ہم واقعی قومی اور مذہبی معاملات میں اس حد تک بے غیرت بن چکے ہیں؟

  89. aftab says:

    Govt got Geo telecasts disrupted

    A top Pemra executive has blown the whistle and unveiled the government’s game plan to misuse its executive authority and defy the Supreme Court, by inflicting heavy damage on the Jang Group by illegally interrupting the cricket World Cup matches telecast by Geo Super TV channel.

    None other than the Regional General Manager (RGM) of Pemra in Balochistan, Gul Muhammad Kakar, who was ordered by Pemra bosses in Islamabad to defy the Supreme Court orders, has provided the hard documentary evidence that Geo was being penalised and persecuted unlawfully by Pemra.

    When the conscientious officer resisted and refused to commit such a crime, he was removed from his position, the documents reveal. In a related development, RGM Kakar has moved an application in the Supreme Court of Pakistan, requesting Chief Justice Iftikhar Muhammad Chaudhry to take suo motu notice of his wrongful removal from Pemra, Balochistan, merely for attempting to implement the apex court’s orders and for not complying with unlawful orders of its acting chairman. (Detailed report on page 4)
    Evidence shows that the RGM Balochistan wrote to Pemra Chairman Dr Abdul Jabbar on March 3, 2011 that he saw no reason for his abrupt removal other than his urge to respect the Supreme Court’s decision with regard to the telecast of the World Cup matches by Geo Super.

    Kakar, also referred to the verbal orders of Dr Jabbar, who, according to the letter, expected from him to let the cable operators interrupt Geo Super’s World Cup telecast by freezing the Geo Super signals and shuffling the channel number on cable networks in the province.

    The communication clearly indicates that Dr Jabbar gave verbal orders to interrupt Geo Super’s World Cup telecast, a clear violation of Supreme Court’s order. Kakar claimed in his letter that he refused to obey the verbal orders, as these were not in line with the Supreme Court’s directives.

    When contacted by The News, Kakar confirmed that he is a victim of Pemra chairman’s wrath after he refused to follow the unlawful orders to facilitate the cable operators to disrupt Geo Super signals during the World Cup matches on cable networks.

    Ever since Geo Super got the exclusive rights for the telecast of World Cup 2011 matches through cable and satellite, the federal government is using all possible means to create problems.

    When contacted, Acting Chairman Pemra Dr Jabbar told The News that if there was any evidence to substantiate the allegations levelled against him, it should be brought before him. In response to all the allegations, he had a one-line response: Show me the proof. Dr Jabbar, it may be added, was appointed Acting Chairman of Pemra when its Chairman, Mushtaq Malik suddenly proceeded on a three-month leave, 10 days before the start of the World Cup.

    Sources in Pemra confirmed that the Presidency is directly involved in this foul play, which continues despite the Supreme Court and Islamabad High Court orders in favour of Geo Super and its exclusive rights on cable and satellite.

    The government used Pemra to connive with cable operators and defy the courts, disturb Geo Super signals and broadcast the ICC World Cup 2011 matches only on PTV Home so that the Jang and Geo Group could be slammed with financial losses in terms of lost advertisement revenues.

    According to credible sources, Acting Chairman Pemra Dr Jabbar by giving certain favours to cable operators, all during the ICC World Cup 2011 and by using Pemra’s regional offices, persuaded and at times coerced cable operators across the country to disturb the Geo Super signals and shuffle its channel number repeatedly so the Jang and Geo Group suffered huge losses.

    This was in blatant violation of assurances Pemra had given before the Supreme Court that Geo Super’s legal rights would be fully protected. In practice, however, it was secretly involved in the dirty game which has now been publicly exposed by its own Balochsitan chief.

    Documents show that Kakar issued notices and warnings to some leading cable operators for violating the apex court’s orders in the case of Geo Super. Instead of getting praise from the Pemra headquarter, Kakar was reprimanded by the Acting Chairman Pemra and ultimately sent back to his parent department in an indecent haste.

    The official Pemra letters available with The News show that the general public registered complaints with Pemra offices that Geo Super signal were being repeatedly shuffled and there were problems with its signals.

    According to these documents, Gul Muhammad Kakar, in his capacity as RGM Balochistan, issued notice (RGM/QTA/(273)/2011/167) to one major cable network of Balochistan namely Combined Broadband Cable Network on February 21, 2011 (3rd day after starting of World Cup).

    This notice reads in its second paragraph: “It has been regretfully observed by the Authority through several public complaints that you are not complying with the instructions issued in above-mentioned circulars and found airing Indian Channel i.e. Star Cricket for ICC World Cup 2011 and scrambled the frequency of Geo Super which is clear violation of Pemra Ordinance 2002 and is contempt of the Honourable Court for not implementing the Honourbale Court’s orders in letter and spirit pertaining to the distribution of ICC World Cup 2011 only on Geo Super. Therefore, you are hereby directed through this notice to stop airing any satellite TV channel/channels other than Geo Super for broadcasting of ICC World Cup 2011 (Live). Non compliance on the matter will lead your firm to strict legal action which may lead to seizure of the equipment, fine or revocation of your cable TV licence as per Pemra rules.”

    According to the documents, the cable operators continued to disturb Geo Super signal and shuffled channel number despite the issuance of this notice. After public complaints, RGM Kakar issued a ‘warning’ to the same major cable network of Quetta. The letter reads: “With reference to this office circular No. RGM/QTA/(44)/2011/99 dated January 25, 2011, RGM/QTA/(44)/2011/168 dated February 21, 2011 and Notice No.
    RGM/QTA/(273)/2011/167 dated February 21, 2011 on subject (Broadcast of ‘ICC World Cup 2011’ on Geo Super) matter. It is regretfully observed by the Authority that you paid no heed to the instruction issued to you pertaining to the distribution of ICC World Cup 2011 on Geo Super only. You are hereby once again directed through this warning to bring Geo Super on its old position i.e. 19 No slot, set the frequency correctly and stop airing any other satellite TV channel that is involved in broadcasting ICC World Cup 2011 illegally with immediate effect. Non compliance with the instructions through warning will lead your firm liable to strict legal action which may lead to seizure of the equipments, fine or revocation of your cable TV license as per Pemra laws.”

    Gul Muhammad Kakar on being approached by The News confirmed writing these letters to cable operators and revealed that even after issuing warnings, the cable operator continued to disturb the Geo Super signals. When he tried to take some action through his staff, the cable operators threatened that they would get the staff members removed. On this, he ordered a raid on cable operators as per Pemra laws. However, Kakar said, Dr Jabbar removed him from Pemra and repatriated him.

    Kakar confirmed to The News that he wrote a letter to present chairman Pemra Dr Jabbar on March 3rd and gave complete details of his services for Pemra and reason of his removal. In this March 3rd letter, Kakar wrote that the only reason of neglecting him was his refusal to act on Dr Jabbar’s verbal orders to interrupt Geo Super signals during the ICC World Cup 2011 matches and broadcasting the matches on PTV Home through cable TV through cable operators in Balochistan.

    At one point, the letter reads: “Sir, I am sorry because I was not in a position to obey your orders due to Supreme Court orders passed in favour of Geo Super.”

    The sources said that Dr Jabbar had been directly interacting with the leading Quetta cable operators to encourage them to violate the Supreme Court’s order. However, when asked, Dr Jabbar again demanded evidence in this regard.

    Kakar told The News that when he met Dr Jabbar in his office to ask him to take his illegal orders back, he (Dr Jabbar) replied that the reason of his removal was that in fact Pemra was removing officers working on deputation. Kakar said he gave Dr Jabbar names of many officials who were working on deputation and also named officials from the province of Punjab who were even given extensions in their deputation period as they were dancing to his tunes.

    http://geo.tv/3-22-2011/79591.htm

  90. یا الله پاکستان پر رحم فرما – ہم کیا سے کیا ہو گئے ہیں. میں ام حالات میں یہ لنک پوسٹ نہ کرتا لیکن پولیس سٹیشنوں میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کو دکھانے کے لئے یہ ضروری تھا. اگر کسی کو برا لگے تو اس کے لئے پیشگی معذرت.

    http://www.youtube.com/watch?v=qaDRZ-Vg5dY&feature=player_embedded#at=143

  91. Bawa said:

    Koran burnt in Florida church
    ———————————–
    غیر مسلم حکمران اپنے بناے ہوے قوانین کی حفاظت کے لئے دوسرے ممالک کو تہس نہس کر دیتے ہیں لیکن مسلم حکمران آج اتنے عیاش ہو گئے ہیں کہ یہ ہماری مقدس ترین کتاب کے نذر آتش ہونے جیسے واقعات کے روکنے کے لئے عملی طور پر کچھ نہیں کر سکے. دین سے دوری اور دنیاوی طاقتوں کے آگے جھکنے کی اس سے بڑی مثال اور کیا ہو گی.
    ٢٠٠١ سے لے کر اب تکمسلم حکمرانوں نے عملی طور پر کچھ بھی نہیں کیا.
    انشا الله اسلام امریکہ اور یورپ میں اور پھیلے گا اور جب یورپی اور امریکی مسمان ہوتے ہیں تو وہ عملی طور پر ہم سب سے اچھے مسلمان ہوتے ہیں.
    ہمارے کٹھ پتلی حکمران اگر چاہیں تو او آئی سی وغیرہ کو آج بھی فعال بنا کر بہت کچھ کر سکتے ہیں . اب جس طرح حالات بدل رہے ہیں انشا الله آنے والے وقتوں میں قرآن کو اپنے دل میں رکھنے والے حکمران بنیں گے.

  92. hypocrite says:

    Revoluion sahib

    یا الله پاکستان پر رحم فرما – ہم کیا سے کیا ہو گئے ہیں. میں ام حالات میں یہ لنک پوسٹ نہ کرتا لیکن پولیس سٹیشنوں میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کو دکھانے کے لئے یہ ضروری تھا. اگر کسی کو برا لگے تو اس کے لئے پیشگی معذرت

    a) With utmost respect, where the honor of a woman is not safe, will it make a difference if the people respect religious texts and scriptures. the religious text and scriptures teach one to safeguard the honor of woman and protect weak and innocents. Even if I codemn the henious act of burning Quran Sharif, but I cannot do anything to save the honor of a woman or protect a weak, then I dont deserve to be called civilized nor I have the right to condemn one cat but not the other. The punishment of a person who victimises a woman, innocents , weak and other human beings shall be more severe than those who have been part of the tragic act of burning a religious scripture.

    الله پاکستان پر رحم فرما

    b) I know my comment may sound crude and get an angry reaction but I fail to understand as why hsall we ask Allah to bless us Pakistanis despite our actions. I think Allah’s blessings shall only be for those who really follow the true teachings of the religion.

  93. aftab says:

    Pakistan: A revolution against whom?

    With inflation on basic household items at 18.88 per cent (according to government figures) and unemployment at an estimated 15 per cent (according to the CIA’s World Factbook), households in Pakistan are feeling the economic pinch.

    Simultaneously, the country appears to lurch from one political crisis to another. The latest issue in the political sphere could have come straight out of a spy novel: the case of Raymond Davis, a CIA contractor who shot and killed two Pakistanis on a Lahore street who he said were attempting to rob him, and was then released after the payment of Rs2.3 million in compensation to the victims’ families.

    The opposition, led by Nawaz Sharif’s PML-N party, has slammed the government for dithering over the issue of whether or not Davis had diplomatic immunity, and for allowing the deal to be struck, terming it a question of sovereignty.

    Meanwhile, the opposition also continues to criticise the government for its performance on service delivery, revenue generation, economic policy and foreign policy (specifically its stance to tacitly stand by the US and its use of drone strikes on Pakistani territory, while simultaneously being unable to curb extremist attacks in the country).

    Things do not appear much better on the social front, with public discourse lurching towards an ever-narrower view of what is acceptable, as evidenced by the recent killings of Shahbaz Bhatti, the federal minister for minorities, and Salman Taseer, the governor of Punjab, for their stance against the country’s blasphemy laws as they currently stand. Analysts argue that the murders are indicative of a country where the social sphere is going through an upheaval that leaves less and less space for liberal discourse.

    It is the Davis case, though, that Imran Khan, the leader of the Pakistani Tehreek-e-Insaf (PTI) party, believes will be the spark that lights public discontent into a mass uprising. Speaking to Time magazine, he says the country is “completely ready” for a revolution, “even more … than Egypt was”.

    Khan called for mass rallies to be held on the Friday after Davis was released, but only a few hundred people showed up at the PTI’s gatherings. Several religious parties, too, called for demonstrations, but were unable to create significant momentum. This after weeks of rallies in several cities where thousands would call for Davis to be tried and hanged.

    So what’s the difference, then, between Pakistan and Egypt, or Tunisia, where popular uprisings based on several of the same push-factors (high inflation, rampant unemployment and a public that feels completely disconnected from the power of the State) have occurred?

    “You quickly run out of the similarities [with Egypt and Tunisia],” says Cyril Almeida, an Islamabad-based columnist. “Far more interesting, and numerous, are the differences.”

    Almeida points out that the uprisings currently being seen across the Middle East are aimed at “long-running dynasties or autocratic rulers”.

    Protesters in Cairo’s Tahrir Square, Manama’s Pearl roundabout and Sanaa’s University Square were united by one slogan: “The people want the fall of the regime”.

    “In Pakistan … we get rid of our dictators every ten years or so… There is no ‘regime’ to overthrow … the first question is: an uprising against whom?” asks Almeida.

    And it is that question that strikes to the heart of the difference between Pakistan and Arab states that are currently facing political upheaval. The political landscape in the country is fundamentally different from that of the Arab states where uprisings are currently occurring, because while protesters in Tripoli, Sanaa, Manama, Cairo, Tunis and other cities were calling for dictators to be overthrown and free and fair elections to be held, Pakistan has no ‘regime’, and already holds elections.

    “Why would you need an uprising against Asif Zardari [Pakistan’s president] when you know 24 months from now that he’s going to get chucked out? Who do you revolt against?” asks Almeida.

    “You can argue that there can be a popular uprising against the political system itself, i.e. against electoral democracy predicated on routine elections and transfer of power, but then you’re in a very different kind of uprising,” he says.

    Dr Hasan Askari Rizvi, a professor of political science and a political analyst, agrees.

    “It is different [from the Arab world] in two or three respects,” he told Al Jazeera. “First, the political system is not so oppressive in Pakistan, and you have a lot of freedom to express your views to organise against the government, set up political parties. And the media, unlike the media in the Arab world, is very free.”

    Moreover, Pakistan arguably already saw its own popular uprising in 2007, when lawyers led a successful political protest movement against former president, General (retd) Pervez Musharraf.

    Second, Rizvi points to an existing framework of elections allowing for governments to be changed.

    His third point, however, is as telling as the question of who to revolt against:

    “Unlike Egypt, or even Tunisia, there is a lot of fragmentation, both political and religious. Split after split – the situation is very polarised in Pakistan. And the religious parties are too ideological and more literalist in their approach than the Islamic parties in [those countries]. The possibility of a nationwide uprising that involves all sections of the population – all political, ideological and ethnic groups – that kind of possibility is very limited.”

    Rizvi says that while there are “common factor[s]” in the population of Pakistan being very young, an “acute dissatisfaction with the performance of the government at all levels, whether federal or provincial”, and “widespread alienation from the rulers and the democratic experiment”, the greater danger in Pakistan is of a government that is unable to govern.

    “Pakistan is threatened with a state of anarchy,” he says, “rather than a nationwide agitation that would topple the government… the situation may be different in Pakistan, but that doesn’t necessarily mean things are stable.”

    An economy in crisis

    Economically, too, Pakistanis are caught between a (increasingly expensive) rock and a hard place. With prices of household goods spiraling (though below the inflation levels of more than 20 per cent seen in 2008), and limited opportunities for work for both skilled and unskilled labour, they are feeling the pinch.

    Kaiser Bengali, a well-respected economist who has worked with the Pakistan People’s Party-led government in the past, argues that the situation in the rural areas is not as bad as in urban centres, where “manufacturing is in a state of recession”.

    For Bengali, the main issue remains one of revenue generation. Without adequate revenue, the government continues to run a deficit of around six per cent, two percentage points above what was agreed under the terms of an International Monetary Fund emergency loan taken a little over two years ago.

    Tax collection rates remain low, and “any new tax would meet opposition”, Bengali says, because taxes that target industries would hurt the PML-N’s primary electorate in Punjab.

    “Currently the government is trying to meet the deficit [targets of four per cent set by the IMF] by cutting development expenditure,” he told Al Jazeera. That means less money for everything from road and infrastructure construction to income support programmes for the country’s poor.

    Bengali argues that between fighting an insurgency, providing flood relief and a “stagnation” of revenues, the government is forced to “squeeze” on development projects that not only provide infrastructure, but also jobs.

    In recent months, the government has seen a large amount of political wrangling over the issue of a Reformed General Sales Tax (RGST) and a proposed agricultural tax that would target large landholdings.

    Bengali argues that the RGST, an indirect tax, in actuality targets large industries as much as it does consumers, and that the agricultural tax is a “good political slogan”, but difficult to enforce.

    In a sign of how dire Pakistan’s income emergency is, the government on March 15 unveiled a “mini-budget” that, between expenditure cuts and new taxes, would free up Rs120 billion. The move implements development expenditure cuts and introduces Rs53 billion in new taxes on income, imports, agriculture and other sectors. The taxes were introduced through presidential ordinances, exempting them from parliamentary approval, with the express intention of meeting the IMF targets.

    Almeida sums up the economic stresses, independent of the government’s budgetary concerns:

    “The economy is doing wretchedly, there is rampant unemployment and lack of growth combining to leave the urban poor particularly vulnerable, if not already plunged into a state of deep economic misery.”

    Of right wing parties and ‘confused idealists’

    Activists in Pakistan say that while the economic and political stresses exist in Pakistan, the difference in landscape makes an uprising unlikely.

    Al Jazeera spoke to Fahad Desmukh, a Pakistani activist and journalist who has lived in Bahrain, where the February 14 uprising is currently calling for major political reforms, for much of his life.

    “Bahrain is relatively free socially, but not politically … opposition activists have been jailed for demanding changes, so the avenues available for expressing social and political frustration are limited,” he says. “On the other hand, Pakistan has a much longer history of political activity, with long-established political parties, student groups and labour unions. The parliament and the executive are elected, and the media is much more free. It means there are more avenues to express frustration and ‘let off steam’, as it were.”

    Desmukh argues that given the lack of a ‘regime’ to revolt against, the only kind of uprising that would “make sense” in Pakistan would be class-based, aimed at ending the country’s feudal system. He concedes, however, that “this seems unlikely in the near future”.

    The only other option would appear to be protests against the country’s military, which holds great influence over the political sphere, but Desmukh, Rizvi and Almeida all agree that such action is also unlikely.

    Beena Sarwar, a political and human rights activist, argues that those calling for a popular uprising in Pakistan are actors “who know they will not come into power through the electoral process – the right wing so-called religious parties… and confused idealists like Imran Khan who seem to have no grip on political realities”.

    Sarwar says that included in this group are politically disillusioned educated young people who are “alienated from the political process” and are “fired by emotion, youthful zeal and vague ideas of Islamic supremacy and anti-Americanism”.

    She argues that wide-ranging political change “will come if the political process is allowed to continue”, through the political parties and parliament, without interference from Pakistan’s military, which, historically, has interrupted democratic transitions with coups.

    Democracy’s ‘birth pangs’

    Rizvi, the professor of political science, and Almeida, the columnist, both disagree, however, at least in so far as the chances of there being any actual positive change.

    Almeida says that while he expects elections to take place as scheduled in 2013, “electoral disappointments are likely”.

    “People forget that the only other option for power [the PML-N] is already in power in Punjab. It mirrors the PPP’s performance … between the PML-N in Punjab and the PPP in Islamabad, there is very little to tell them apart, in terms of incompetence.”

    “The latest phase of electoral politics is less than three years old, so I don’t think there’s any fatigue with the system, even if there’s genuine tiredness with the current government… Ultimately the great worry for Pakistan is that it may not have enough time to go through the birth pangs of democracy because of the security situation.”

    Rizvi agrees that the outlook for political change is bleak.

    “[The political parties] are good at engaging in polemics, they are good at criticising, but none has been able to present a formula or a framework for addressing socioeconomic problems,” he says, pointing to the example of the issue of terrorism, on which political parties “make ambiguous statements and avoid taking a categorical position against particular groups”.

    “I don’t expect [new political players to gain popular support] in the near future, because all the political parties lack ideals and a sense of direction, except in rhetoric.

    “The thing I would repeat is my fear that increasingly the Pakistani state system is on a very fast downward slide. If it is not collapsing, it is losing its capacity to function effectively.”

    With another military coup unlikely, given that the memory of a Pakistan under Gen (retd) Pervez Musharraf that was not doing much better is still fresh in most Pakistanis’ minds, and the likelihood of substantive political change from within the existing system being limited, at least in the short term, what appears most likely is that Pakistan will, as it has for so many years now, blunder on.

    It is a country riven with ethnic, religious and political divisions, battling multiple insurgencies (in the Federally Administered Tribal Areas and Balochistan), and facing both economic and identity crises.

    “And yet,” as Anatol Lieven, a scholar and journalist argues in a soon to be released book, “it moves.”

    http://www.aljazeera.com/indepth/features/2011/03/2011322132948393481.html

  94. ’پاکستانیوں سے نفرت تو پہلے ہی تھی‘
    بحرین میں پھنسے پاکستانی شہریوں کا کہنا ہے کہ گزشتہ کافی عرصے سے مقامی لوگوں کے دلوں میں ان کے لیے نفرت موجود تھی، جب پولیس اور رینجرز نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے تشدد کیا تو وہ اس کے ردعمل کا شکار بنے۔

    بحرین کی پولیس اور رینجرز میں پاکستانیوں کی بڑی تعداد موجود ہے، جس نے حکومت مخالف مظاہرین کے خلاف کارروائی کی۔

    کراچی میں ہمارے نامہ نگار ریاض سہیل سے فون پر بات کرتے ہوئے محمد عمران، جن کا تعلق سیالکوٹ سے ہے اور وہ مناما میں مزدوری کرتے ہیں، نے کہا کہ وہ اپنے فلیٹ میں سوئے ہوئے تھے کہ چالیس سے زائد افراد نے ان پر حملہ کردیا۔ ’حملہ آوروں نے ہاتھوں میں تلواریں، لاٹھیاں اور چاقو اٹھا رکھے تھے۔‘

    ’انہوں نے مارا اور کہا کہ تم لوگ پولیس میں ہو، رینجرز میں ہو یہاں تمہاری حکومت ہے۔ حکومت سے تم لوگوں نے کتنے پیسے لیے ہیں۔‘

    عمران کے مطابق حملہ آوروں نے گیس سلینڈر کھولا اور آگ لگادی جس سے ان کا ہاتھ اور چہرے بری طرح جھلس گیا۔ ’حملہ آور یہ سوچ کر چھوڑ گئے کہ یہ مرچکے ہیں۔ بعد میں ایک دو اور لوگ آئے اور انہوں نے ایمبولینس کو بلایا۔ لیکن سلمانیہ میں ہسپتال انتظامیہ نے ہمیں داخل کرنے سے انکار کردیا اور آخر دوسری ہسپتال منتقل کیا گیا۔‘

    حملہ آور یہ سوچ کر چھوڑ گئے کہ یہ مرچکے ہیں۔ بعد میں ایک دو اور لوگ آئے اور انہوں نے ایمبولینس کو بلایا۔ لیکن سلمانیہ میں ہسپتال انتظامیہ نے ہمیں داخل کرنے سے انکار کردیا
    عمران
    منڈی بہاؤ الدین کے اظہر عباس دس ماہ سے مناما میں ہیں اور حالیہ تشدد کی لہر میں زخمی بھی ہوئے۔ ان کا کہنا ہے کہ فلیٹ پر حملے کے بعد انہوں نے بھاگنے کی کوشش کی مگر حملہ آوروں نے انہیں پکڑ کر تشدد کا نشانہ بنایا۔

    ’انہوں نے مارنے کے بعد زخموں پر پانی پھینکا اور تصویر بنائی۔ اس کے بعد لائیٹ مارکر سانسیں دیکھیں اور یہ یقین کیا کہ سانسیں نہیں چل رہیں تو وہ چھوڑ کر چلے گئے۔ اس کے بعد میں نے پولیس اور ایمبولینس سروس کو فون کیا مگر انہوں نے آنے سے انکار کردیا۔ میں پانچ چھ گھنٹے وہاں پڑا رہا مگر کوئی نہیں آیا بعد میں اپنے ساتھیوں سے رابطہ کیا جنہوں نے ہسپتال پہنچایا۔‘

    جاوید فرخ گزشتہ سات سالوں سے بحرین میں کام کرتے ہیں اور بیوی اور دو بچوں کے ساتھ رہتے ہیں۔ ان کے مطابق وہ پڑوسیوں کے ہی حملے کا نشانہ بنے۔

    پہلے سے ہی تھوڑی تھوڑی آگ بھڑک رہی تھی۔ وہ دیواروں پر نعرے لکھتے تھے کہ پاکستانی یہاں سے چلے جاؤ۔ اس طرح کے جذبات آگ بن گئی۔
    محمد داؤد
    ’جب وہ مجھے ما رہے تھے تو بیوی بیچ میں آئی۔ انہوں نے اس کے سر پر بھی ڈنڈے مارا۔ البتہ چھوٹے بچوں کو انہوں نے کچھ نہیں کہا۔‘

    جاوید کے مطابق حملہ آور بحرین سے نکل جانے کا کہہ کر چلے گئے۔ ’میری بیوی نے جہاں میں کام کرتا ہوں ٹیلیفون کر کے آگاہ کیا۔ وہ ہی لوگ ایمبولینس لے کر آئے مگر راستے پر مشتعل لوگ کھڑے تھے اس لیے واپس گھر آگئے جہاں سات آٹھ گھنٹے پڑا رہا۔‘

    محمد داؤد کا تعلق پاکستان کے زیر انتظام کشمیر سے ہے اور وہ گزشتہ دو سالوں سے مناما میں کام کررہے ہیں۔ انہوں نے اس وقت دیگر ساڑھے تین سو پاکستانیوں کے ساتھ مناما میں پاکستان کلب میں پناہ لے رکھی ہے۔

    ان کا کہنا ہے کہ وہ صرف دن کے وقت باہر نکلتے ہیں۔ ’پہلے سے ہی تھوڑی تھوڑی آگ بھڑک رہی تھی۔ وہ دیواروں پر نعرے لکھتے تھے کہ پاکستانی یہاں سے چلے جاؤ۔ اس طرح کے جذبات آگ بن گئی۔‘

    پاکستانی شہریوں کا کہنا ہے کہ حکومت کو انہیں فوری نکالنے کا بندوبست کرنا چاہیے کیونکہ وہ واپسی کے اخراجات برداشت نہیں کرسکتے۔
    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2011/03/110323_bahrain_pakis_attack_rh.shtml

  95. Faisalabad power looms strike continues
    Faisalabad power looms strike continues Two lakh labours have lost their jobs due to strikes.

    At least 2 lakh power looms in Faisalabad remained closed for second consecutive day in protest against hike in sales tax.

    Strike of textile sizing factories is also continued from last week. The Federal Board of Revenue has called the textile organisations to Islamabad for talks.

    According to labour organisations, 2 lakh labours have lost their jobs due to strikes. Traders’ organisations have also called their emergency meeting tomorrow to take decision on shutter down strike.

    http://dunyanews.tv/index.php?key=Q2F0SUQ9NSNOaWQ9MjI4MzA=

  96. “Jupiter .. Thou are angry therefore thou are wrong!”
    CJ IMC is now touching the lowest point in his career.. one thing which makes me sad is that establishment uses individuals like IMC as toilet papers and yet history gives them chance to refuse to become a toilet paper but they never avail such opportunity. Despite working with the Dom (Kyani) against mad dictator, CJ IMC had a genuine chance to break free himself from the clutches of establishment after his restoration. He could have ensured that Kyani and Pasha does not get the extension by blackmailing U.S and government. He could have focused on the better justice in lower courts and could have easily stayed on the top and honorable in the eyes of people of Pakistan. But he preferred to stay at the level of his brothers Abdul Hamid Dogar and Ramday.

    Taj Haider is one of the very sane voices in the political sphere, his words are very thoughtful and actions are very commendable. Taj Haider was one of the front leaders in the movement against the mad dictator. CJ IMC could not muster the courage to issue contempt notice to Kyani and his cronies but he had the audacity to issue the contempt notice Taj Haider… shameful and disgusting!!!

  97. President Zardari remits jail term of Indian convictAgencies(1 hour ago) TodayPresident Asif Ali Zardari with Indian Prime Minister Manmohan Singh. – File Photo by AFP
    KARACHI: President Asif Ali Zardari on Sunday remitted the remaining jail sentence of Indian convict Gopal Das detained in jail for the past 27 years on humanitarian grounds, reports said.

    Spokesperson to the President, Farhatullah Babar, said that the remission was granted on the advice of Prime Minister Yousuf Raza Gilani to honour the appeal of the Supreme Court of India to the government of Pakistan.

    He said several Indian newspapers had recently reported that in an unusual step the Supreme Court of India had appealed to the Pakistani government to consider granting remission to Gopal Das on humanitarian grounds and to release him. Nearly two weeks ago, the Indian Supreme Court made the appeal while disposing of a writ petition filed by Gopal Das through his brother.

    The bench comprising of Justice Markandey and Justice Gyan Sudha observed: “We cannot give any direction to Pakistani authorities because we have no jurisdiction over them. The Indian authorities have done all that they could in the matter. However, that does not prevent us from making a request to the Pakistani authorities to consider the appeal of the petitioner for releasing him on humanitarian grounds by remitting the remaining path of his sentence.”

    Justice Markandey had also quoted a couplet by Faiz: “Qafas uddas hai yaaro sabaa se kuch to kaho, Kaheen to beher-i-khuda aaj zikr-i-yaar chale”

    Farhatullah Babar said according to official record, the convicted prisoner Gopal Das s/o Behari Lal was sentenced to life imprisonment in June, 1987 and was set to be released by the end of this year under the law.

    Babar said acting on the advice of Prime Minister Gilani, based on the appeal of the Supreme Court of India, the President today remitted the remaining jail term of Gopal Das.

    Farhatullah Babar said President Zardari signed the remission advice in the early hours of Sunday soon after the invitation of Prime Minister Manmohan Singh was accepted and it was decided that Prime Minister Gilani will proceed to Mohali to witness the semi-final cricket match between the teams of the two countries.

    It may be mentioned that the Interior Secretaries of Pakistan and India will meet on Monday — first in the series of meetings taking place under the umbrella of a revived full spectrum dialogue between the two countries.
    http://www.dawn.com/2011/03/27/president-zardari-remits-jail-term-of-indian-convict.html

    بھارتی سپریم کورٹ کی درخواست بھی مان لیتے ہیں اور اپنے سپریم کورٹ کے فیصلے ردی کی ٹوکری میں پھینک دیتے ہیں. .

  98. میچ نہیں ہماری شامت آئی
    نعیمہ احمد مہجور | 2011-03-27 ،12:10

    جب بھارت اور پاکستان کی کرکٹ ٹیمیں ایک دوسرے کے مد مقابل ہوتی ہیں تو کشمیر میں صورت حال برصغیر سے ہمیشہ مختلف ہوتی ہے۔ میچ کے دوران سڑکوں گلیوں اور گھروں کے اندر اتنی کشیدگی ہوتی ہے کہ آپ بار بار کھڑکی کی جانب دیکھنے پر مجبور ہوتے ہیں کہ کہیں سیکورٹی والے تو نہیں آئے (یہ کہنے کی ضرورت نہیں کہ سیکورٹی والے کیوں آتے ہیں)۔

    انیس سو ستاسی میں بھارت پاکستان کے درمیان خاصی کشیدگی تھی البتہ کشمیر میں ابھی مسلح تحریک کا آغاز نہیں ہوا تھا۔ مجال ہے کہ اُس وقت بھی آپ کمنٹری کے دوران پاکستانی کھلاڑیوں کے چھکے یا چوکے پر سیٹی بجائیں (بھارتی کھلاڑیوں کی داد دینے پر پابندی نہیں تھی ) کیونکہ حکومت یا ان کے اہلکاروں کو پاکستان سے چِڑ تھی جس کے باعث ہر گلی، نکڑ اور چوراہے پر پولیس تعینات ہوتی، اس کے باوجود ڈاؤن ٹاؤن میں نصف شب کو پٹاخے سنائی دیتے اور ہم نیند میں ہی مسُکرادیتے۔
    بعض کشمیری جنہیں کرکٹ کا جنون تھا گراؤنڈ میں میچ دیکھنا چاہتے تھے مگر’کشمیری لیبل’ بھارت پاکستان کے لئے چونکہ نیک شُگن نہیں لہذا ریڈیو کمنٹری پر ہی اکتفا کرنا پڑتا اور پولیس کی موجودگی میں بیچارے داد بھی نہیں دے پاتے۔
    پھر جب جنرل مشرف دلی میچ دیکھنے آئے اُس وقت کشمیر خون خرابے کے ایک لمبے دور سے گزر رہا تھا۔ بیشتر کشمیری طلبا بھارتی دانش گاہوں میں تعلیم حاصل کر نے لگے تھے، اُن میں یہ اُمید ابھری تھی کہ بھارتیوں کے ساتھ انٹیگریٹ ہوکر’ کشمیری لیبل’ سے چھُٹکارا مل گیا ہوگا اور انہیں بھی راجیو گاندھی اور جنرل مشرف کے ساتھ میچ دیکھنے کا موقعہ دیا جائے گا۔ دلی میں پانچ چھ سال گزارنے کے باوجود ‘کشمیری لیبل’ بدستور قائم تھی بلکہ اتنی گہری ہوگئی تھی کہ وہ ہر وقت بھارتی پولیس کی نگرانی میں رہتے تھے گوکہ انہیں اس کا کوئی علم نہیں تھا۔
    کرکٹ دیکھنے کا موقعہ تو نہیں ملا مگر بعض طلبا نے کامن ویلتھ گیمز دیکھنے کا پروگرام بنایا۔ گیمز شروع ہونے سے پہلے ہی اُن کو گاڑی میں بٹھا کر دلی سے باہر کر دیا گیا کیونکہ وہ ‘سیکورٹی کے لئے خطرہ’ تھے۔

    اب من موہن سنگھ اور گیلانی مل کر میچ دیکھیں گے مگر موپالی سے تقریباً پانچ سو کلو میٹر دور وادی میں موت کا سماں ہوگا کیونکہ سیکورٹی کی موجودگی میں آپ اُف بھی نیں کر سکتے گوکہ رات کے دوران دو طرح کے پٹاخے ضرور سنائی دیں گے۔ اگر پاکستان نے میچ جیتا تو پاکستان نواز اور آزادی نواز دونوں کشمیری چھتوں پر سیکورٹی کو چکمہ دیکر ضرور خوشی کا مظاہرہ کریں گے (کرکٹ کے وقت سبھی پاکستان نواز بن جاتے ہیں) اور اگر بھا رت نے بازی جیت لی تو سیکورٹی والے بنکروں اور کمیپوں میں پٹاخے چھوڑ کر اپنی خوشی کا اظہار کریں گے۔

    ایسے وقت جب دونوں ملک کے درمیان کشیدگی بڑھتی ہی جارہی ہے اگر اُن کے حکمرانوں کے ایک دوسرے کے بغل میں بیٹھ کر میچ کا مزا لینے سے برصغیر کے کروڑوں عوام کو کچھ دن سکون سے رہنے کا موقعہ ملے گا تو اس کو ضرور سراہنا چاہے البتہ اس پر بھی غور کرنے کی ضرورت ہے کہ دونوں ملکوں کی سیاست کے نیچے دبی تقریباً اسی لاکھ کی آبادی مسلسل گھبراہٹ، تشدد اور بمباری کی ذد میں پچھلے ساٹھ برسوں سے ایک ایک پل گِن گِن کرگزار رہی ہے۔اُس پر ستم یہ کہ ذہنی عتاب کا شکار آبادی سے میچ دیکھنے کا حق بھی چھین لیا جاتا ہے۔
    http://www.bbc.co.uk/blogs/urdu/2011/03/post_717.html

  99. Bawa says:

    Pakistan Christian Post

    Muslims kill two Christian in a Church attack in Pakistan

    Hyderabad: March 23, 2011.(Barnabas Fund News) Two Christian men were shot dead in an attack on a Pakistan church by Muslim youths last night (Monday 21 March).

    Father of four Yunis Ilyas (47), whose family is supported by a Barnabas Fund feeding programme, and newly-wed Jameel Masih (21) were killed on the spot during the incident at a church in Hoor Camp, Hyderabad. Two others were injured; one of them, Sadiq Masih, was transferred to a hospital in Karachi, where he is in a critical condition.

    The incident started at around 6.30pm when Muslim youths began shouting vulgar abuse at Christians who were arriving for a prayer service at the church. The pastor and a number of other Christians remonstrated with the Muslim boys, but they continued insulting the Christian girls. The Muslim aggressors left the scene, but they returned shortly afterwards with pistols and fired at Christians as they were coming out of the church.

    http://www.pakistanchristianpost.com/headlinenewsd.php?hnewsid=2697

    نہایت ہی افسوسناک واقعہ جسکی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے

    حیرت ہے کہ آٹھ نو دن گزر جانے کے باوجود پاکستان کے کسی اخبار اور کسی ٹی وی چینل نے یہ خبر کیوں نہیں دی؟

    کیا واقعی یہ واقعہ وقوع پزیر ہوا ہے؟ کیا قتل کی کوئی پولیس رپورٹ درج ہوئی ہے؟ کیا مرنے والوں کا کوئی پوسٹ مارٹم ہوا ہے؟

    یقین نہیں آ رہا کہ اتنا بڑا واقعہ ہوا اور کسی کو خبر نہ ہو سکی؟ کیا کسی نے اس خبر کی تصدیق کرنے کی کوشش کی؟

    حکومت کی طرف سے خبر چھپانے کی بات تو سمجھ آ سکتی ہے (حالانکہ ایسا ممکن نے ہے) لیکن وہ الطاف حسین اور ایم کیو ایم جو کسی کے سر میں درد ہونے پر بھی پریس ریلیز جاری کرتا ہے حیدرآباد کے اتنے بڑے واقعے پر انکی خاموشی سمجھ سے بالا تر ہے

  100. Bawa says:

    حقیقت کیا تھی؟ بی بی سی کی رپورٹ

    نہ تو یہ فلوریڈا میں قران جلانے کا رد عمل تھا، نہ چرچ پرحملہ اور نہ ہی اسمیں انجیل مقدس کو جلایا گیا. کریسچیں ویبسایٹس چند مقامی لڑکوں کی لڑائی کو مذہبی رنگ دینے کی کوشش کر رہی ہیں

    حیدر آباد: ہلاکتوں کے خلاف احتجاج

    پاکستان کے صوبہ سندھ کے شہر حیدر آباد میں پیر کی رات گئے قتل کیے جانے والے دوعیسائی نوجوانوں کے ورثاء نے رات بھر قومی شاہراہ پر ان کی لاشیں رکھ کر احتجاج کیا ہے. منگل کی صبح ضلعی پولیس افسر فرید سرہندی کی یقین دہانی پر مظاہرین لاشیں اٹھا کر ان کی آخری رسومات کے لیے چلے گئے. ضلعی پولیس افسرنے رات بھر دھرنا دینے والوں کو یقین دلایا کہ دو افراد کے قتل کے مرتکب افراد کو منگل کی شام تک حراست میں لے لیا جائے گا

    حیدرآباد کی بلدیہ کالونی میں جہاں عیسائی برادری طویل عرصے سے رہائش پذیر ہے، پیر کی رات کو علاقے میں واقع ایک گرجا گھر کی پہلی سالگرہ کی تقریبات جاری تھیں اور اس تقریب میں خواتین بھی موجود تھیں. اسی دوران علاقے میں رہنے والے پالاری برادری کے نوجوان تیز آواز میں گانے بجا رہے تھے جس پر عیسائی لوگوں نے انہیں باز رہنے کے لیے کہا، اس پر دونوں کے درمیاں تلخ کلامی ہوگئی. عیسائی لوگوں کا کہنا ہے کہ’ لوگوں کے صلح کرانے کے باوجود پالاری نوجوان اپنے گھروں کوگئے اور آتشی اسلحہ لے آئے اور انہوں نے اندھا دھند فائرنگ شروع کردی. فائرنگ سے پانچ افراد زخمی ہو گئے جن میں سے دو شادی شدہ افراد موقع پر ہی ہلاک ہوگئے

    نامہ نگار علی حسن کے مطابق اس واقعے کے بعد مسیحی لوگوں میں اشتعال پیدا ہوگیا اور وہ لاشوں کو لے کر قومی شاہراہ پر دھرنا دے کر بیٹھ گئے اور انہوں نے پیپلز پارٹی اور متحدہ کے نمائندوں کی دھرنا ختم کرانے کی کوششوں کو بھی رد کردیا اور رات بھر سڑک پر بیٹھے رہے اور ٹریفک بھی بند رہی۔ منگل کی صبح ڈی پی او سڑک کھلوانے کی غرض سے دھرنے کے مقام پر آئے اور لوگوں سے بات چیت کی اور لوگوں کو دھرنا ختم کرنے پر آمادہ کیا۔ دھرنے پر موجود گرجا گھر کے پادری فادر سیمسن کا کہنا تھا کہ اگر منگل کی شام تک قتل کے ذمہ دار افراد کو حراست میں نہیں لیا گیا تو مسیحی برادری کے لوگ مقتولین کی آخری رسومات کے بعد دوبارہ دھرنا دیں گے

    http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2011/03/110322_christians_killing_protest_zz.shtml

  101. سیمی فائنل: کشمیر میں امیدیں اور خدشات

    غلام احمد کو اس میچ سے بڑی امیدیں وابستہ ہیں
    بھارت کے زیرِانتظام کشمیرمیں بیشتر حلقوں کو موہالی میں بدھ کو کھیلے جا رہے ورلڈ کپ سیمی فائنل سے توقعات بھی ہیں اور خدشات بھی۔

    اکثر حلقے کہتے ہیں کہ یہ مقابلہ بھارت اور پاکستان کے درمیان تلخیاں ختم کرنے کا باعث بنےگا جبکہ سرکاری حکام نے وادی میں میچ کے بعد امکانی گڑ بڑ کو روکنے کے لئے پیشگی اقدامات کیے ہیں۔

    جھیل ڈل کے کنارے سیاحوں کو کپڑے فروخت کرنے والے غلام احمد کہتے ہیں:’میں نے کبھی کرکٹ میچ نہیں دیکھا ہے۔ لیکن لگتا ہے اس بار ہندوستان اور پاکستان کی صلح ہوجائے گی۔ خدا کرے ایسا ہی ہو۔ کھیل کا کھیل ہوگا اور ہمار مسئلہ بھی حل ہوجائے گا۔‘

    میں نے کبھی کرکٹ میچ نہیں دیکھا ہے۔ لیکن لگتا ہے اس بار ہندوستان اور پاکستان کی صلح ہوجائے گی۔ خدا کرے ایسا ہی ہو۔ کھیل کا کھیل ہوگا اور ہمار مسئلہ بھی حل ہوجائیگا۔
    دوکان دار
    طالب علم یُسرا کہتی ہیں کہ کرکٹ کو پاک۔بھارت سیاست کے ساتھ نتھی کرنا کھیل کا مزہ خراب کرتا ہے۔ ’بات چیت ضروری ہے اور دونوں ملکوں کے بیچ نزدیکیاں پیدا ہونا اچھی بات ہے، لیکن کشمیر بہت سنجیدہ مسئلہ ہے، یہ کھیل کھیل میں حل نہیں ہوگا۔‘

    کشمیری یونیورسٹی میں شعبہ سیاسیات کے پروفیسر گل وانی کو لگتا ہے کہ دونوں ملکوں کے وزرائے اعظم میچ کے بہانے کشمیری علیٰحدگی پسندوں کو مذاکرات میں شامل کرنے کے لئے اہم ’چینلز استعمال کرینگے۔‘ میچ سے زیادہ یہ بات اہم ہے کہ وزیراعظم نے پاکستانی ہم منصب کو مدعو کیا ہے۔ اس سے بھی اہم بات یہ ہے کہ مسٹر یوسف رضا گیلانی نے دعوت قبول کرلی۔ کچھ نہ کچھ ہے جو کھیل کے حاشیہ پر بھی ہوگا۔‘

    یسری کے مطابق بھارت پاک کے مسائل میچ سے حل نہیں ہوں گے
    پچھلے کئی ماہ سے کشمیریوں کے ساتھ مذاکرات کررہے وزیراعظم منموہن سنگھ کے سہ فریقی رابطہ گروپ کی نمائندہ رادھا کمار کہتی ہیں: ’میچ تو میچ ہے۔ لیکن اس کے ساتھ جو سفارتی گرمجوشی دکھائی دے رہی ہے، لگتا ہے کہ دونوں ملکوں کے درمیان ممبئی حملوں کے بعد جو تلخیاں اور کدورتیں پیدا ہوگئی تھیں وہ ختم ہوجائینگی۔‘

    اپوزیشن جماعت پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی کے ترجمان اور کالم نویس نعیم اختر کا کہنا ہے کہ کشمیریوں کا مستقبل بھارت اور پاکستان کی دوستی کے ساتھ منسلک ہے۔

    اِدھر وادی میں پاک۔بھارت سیمی فائنل سے قبل ہی تناؤ کی کیفیت ہے۔ لوگوں نے کئی مقامات پر اجتماعی طور بڑے سکرین پر میچ دیکھنے کا اہتمام کیا ہے لیکن حکام کہتے ہیں اس سے امن و قانون کو خطرہ ہے۔

    سرینگر کے ڈپٹی کمشنر معراج الدین ککرو نے بتایا:’احتیاطی اقدامات کئے جارہے ہیں، حالات کو خراب کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔‘

    کشمیر کے پولیس سربراہ شِو موراری سہائے کہتے ہیں :’ہمیں کوئی خفیہ اطلاع نہیں ہے، لیکن ہم کسی بھی امکانی صورتحال سے نمٹنے کے لئے تیار ہیں۔‘

    قابل ذکر ہے کہ حالیہ دنوں جب پاکستان نے آسٹریلیا کے خلاف میچ جیتا تھا تو سرینگر اور دوسرے قصبوں میں نوجوانوں نے آتش بازی کی تھی تاہم فورسز کے ساتھ ان کا کوئی تصادم نہیں ہوا تھا۔

    http://www.bbc.co.uk/urdu/india/2011/03/110329_kashmir_mohali_match_sz.shtml

  102. Bawa says:

    آپ ہی اپنی اداؤں پہ ذرا غور کریں
    ہم اگر عرض کریں گے تو شکایت ہوگی

    عوامی نمائندے سڑکوں پر عدلیہ کے فیصلوں کا مذاق اڑا رہے ہیں، چیف جسٹس افتخار چوہدری

    اسلام آباد (نمائندہ جنگ)سپریم کورٹ کے چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے جنرل پرویز مشرف پر حملہ کیس کے نظرثانی کی اپیلوں کی سماعت کی، ملزمان کی جانب سے کرنل (ر) اکرم اور حشمت حبیب ایڈووکیٹ پیش ہوئے،ملزمان کی جانب سے کرنل (ر) اکرم نے عدالت میں موقف اختیارکیا کہ جرنیل عدالتی فیصلوں کونہیں مانتے اور مذاق اڑاتے ہیں. چیف جسٹس نے کہا کہ جرنیل تو بند کمروں میں عدالتی فیصلوں کا مذاق اڑاتے ہیں جبکہ عوامی نمائندے سڑکوں پر ایسا کرتے ہیں

    http://www.jang.net/urdu/details.asp?nid=517926

    عزت مآب چیف جسٹس کے ریمارکس کے مطابق جرنیلوں کا بند کمروں میں عدالتی فیصلوں کا مذاق اڑانا قابل اعتراض نہیں صرف عوامی نمایندوں کا سڑکوں پر عدلیہ کے فیصلوں کا مذاق اڑانہ قابل اعتراض ہے

    میرے خیال میں چیف جسٹس صاحب کو یہ بھی فرما دینا چاہئیے تھا کہ جرنیلوں کی طرح غیر منتخب لوگوں کا سڑکوں پر عدلیہ کے فیصلوں کا مذاق اڑانہ بھی قابل اعتراض نہیں ہے. یہی وجہ ہے کہ

    چیرمین نیب کیس میں عدالتی فیصلوں کا مذاق اڑانے والوں (ہڑتالیں اور مظاہرے کرنے والوں – تاج حیدر، شرجیل میمن) کو توہین عدالت کے نوٹس جاری ہوئے اور

    ریمنڈ ڈیوس کیس میں عدالتی فیصلوں کا مذاق اڑانے والوں (ریلیاں اور جلوس نکالنے والوں – جنرل حمید گل، عمران خان) کو برداشت کیا گیا

    آزاد عدلیہ – زندہ باد

    چیف تیرے جانثار بے شمار بے شمار
    چیف تجھ پر دل نثار چیف تجھ پر جان نثار

  103. aftab says:

    Moonis sent to camp jail on judicial remand

    Moonis Elahi was produced before the court of Judicial Magistrate, Muhammad Irfan Basra on completion of 14-day period of physical remand.

    FIA officials informed the court of completion of the physical remand and that now the defendant may be sent to jail.

    Counsel of the defendant argued that the prison will be a dangerous place for Moonis Elahi and therefore he may be detained in a rest house.

    The court sought a response in this regard from the Punjab government and upon getting permission Moonis Elahi was sent to a rest house situated in Cantt area which was declared a sub jail.

    http://geo.tv/4-1-2011/79935.htm

  104. Daanish Schools: Postponed ceremonies cost Rs2.72 million
    LAHORE:
    As much as Rs2.72 million has been wasted as the inauguration of a Daanish School in Chishtian was postponed thrice because Chief Minister Shahbaz Sharif could not attend the ceremony as scheduled, The Express Tribune has learnt.
    The inauguration is now scheduled to take place on Sunday (today).
    In a letter written to the provincial chief secretary and finance secretary, Bahawalnagar district coordination officer has sought Rs2.7 million to arrange Sunday’s event.
    An official speaking on conditions of anonymity told The Express Tribune that Rs3.9 million had been released to the Bahawalnagar DCO to arrange the ceremony. He said that the DCO had told the government that Rs2.72 million was spent on arranging the event on February 22, March 3 and March 21. He said on all three occasion the event had to be postponed because of chief minister’s unavailibility.
    He said the Chief Minister’s Secretariat had directed the district administration to complete all arrangements at least 48 hours ahead of the event. However, he said, on all three occasions, the secretariat had postponed the event a day before the scheduled date. He said by that time the event managers had already completed the arrangements.
    The chief minister has already inaugurated Daanish Schools in Rahim Yar Khan and Hasilpur (in Bahawalpur district). Besides the first batch of students, the ceremonies were attended by government officials, journalists and foreign dignitaries.
    Published in The Express Tribune, April 03rd, 2011.

    http://tribune.com.pk/story/141912/d…s2-72-million/

  105. pakistanshows says:

    Totally agree with aftab’s suggestion that Moonis Elahi was produced before the court of Judicial Magistrate, Muhammad Irfan Basra on completion of 14-day period of physical remand.

    FIA officials informed the court of completion of the physical remand and that now the defendant may be sent to jail.

    Counsel of the defendant argued that the prison will be a dangerous place for Moonis Elahi and therefore he may be detained in a rest house.

    The court sought a response in this regard from the Punjab government and upon getting permission Moonis Elahi was sent to a rest house situated in Cantt area which was declared a sub jail.

    http://pakistanshows.com/PakistanTVShows/geo-news/khabarnaak

Leave a Reply