7 Comments

  • Volcano April 9, 2011 8:08 pm

    This programme could be much improved if Hassan Nisar performs the role of “pagal” himself.

  • klosedstreet April 10, 2011 1:55 am

    حسن نثار کی ساری باتیں اپنی جگہ پر لیکن یہ محب وطن جرنیل آ کر ملک کی تقدیر بدل سکتے ہیں- ایک بار لوگوں کے لیے آئیں اور صفائی کر کے چلے جایئں ، ارے بھائی اس پاک فوج نے جتنا بیڑا غرق کیا ہے اسی کو تو بھگت رہے ہیں آج تک – کوئی کسر رہ گئی ہے تو باقی کے ‘محب وطن ‘ جرنیل اکر وہ بھی پوری کر دیں تاکہ نہ رہے بانس نہ بجے بانسری

  • klosedstreet April 10, 2011 2:06 am

    The entire education should be in English – Urdu is not capable to handle the jargons of most of the subjects. Like urdu of ‘current’ is ‘برقی رو ‘, urdu of ‘conductor’ is ‘موصل دھاتیں ‘. The issue is, first we learn the basics in urdu and then in english at advance level.

  • klosedstreet April 10, 2011 2:18 am

    its better to prevail in english throughout. agree with the panel that knowledge is only exist in english now days. . . .

  • waqarsheikh April 10, 2011 11:32 am

    Ayub khan was founder of Pakistan’s progress… Generals after him as well as politicians acted as traitors for Pakistan… Good comments by Nisar Saib for Ayub Khan… Iis country mein ksi ko Ayub Khan k favour mein bolny ki permission nhn hai but he is Vocal and Bold Person… So ALLAH should take care of him… Aamin…

  • Aamir Malik April 13, 2011 10:20 pm

    ek nisab i agreed

  • sahiralijaff May 4, 2011 9:56 am

    پی پی کو موجودہ حکومت اور اس کے تمام اتحادی بے نقاب ہوچکے ہیں۔اب اس بات میں کوئی شک نہیں رہا کہ یہ سب حکومت نہیں امریکہ کی ملازمت کرنے آتے ہیں۔اور امریکہ کے ایجنڈے کو آگے بڑھا رہے ہیں۔
    عوام خوش تھی کہ ۱ سال بعد ان سے نجات مل جائے گی لیکن یہ ق لیگ اور دیگر امریکی پتلوں کے ذریعے پھر اپنی تمام تر نحوست کے ساتھ اس ملک پر مسلط ہونا چاہتے ہیں۔ ہمیں اگر اس ملک کو ان کی سیاہ کاریوں سے بچانا ہے تو ضرور کچھ نہ کچھ کرنا ہوگا ۔ میںنے فیس بک پر ایک پیج بنایا ہے میں ان تمام لوگوں سے گزارش کرتا ہوں جو اس ملک کا زرا سا بھی درد رکھتے ہیں کہ اس بیچ پر آئیں تاکہ ذیادہ سے ذیادہ لوگ ایک پلیٹ فارم پر جمع ہو کر اپنی اواز بلند کریں۔
    ایڈریس یہ ہے
    http://www.facebook.com/people/Todya-TodayNews/100001402663602

Add Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *